Haseen Khwabon Ki Sorat | Haseen Aankhen Poetry

Haseen Khwabon Ki Sorat | Haseen Aankhen Poetry

Haseen Khwabon Ki Sorat Mein Jaal Phainkte Hain
Pari yeh log munafiq hain jhoot boltay hain

Sabhi ne sonpa howa kaam karna hota hai
Sitare roshni karte hain kuttay bhonkte hain

Koi tou farq bhi ho hadsaat hone par
Khuda tou dekhta hai saath hum bhi dekhte hain

Jo bache duniya ke maktab mein kamyab nah hoon
Hum unko din ki khidmat karne bhejte hain

Yeh kaisi sharten keh yaktarfa ishq thori hai
Milen tou kya nahi karna yeh mil ke dekhte hain

Tere qareebi thark jhaarte hain hum peh magar
Hum un ke pass tujhe dekhne ko bethte hain

Mein tere baad kahin ka nahi raha afkar
Jahan bhi jawon sabhi log tera pochte hain

Haseen khwabon ki sorat mein jaal phainkte hain
Pari yeh log munafiq hain jhoot boltay hain
غزل
حسین خوابوں کی صورت میں جال پھینکتے ہیں
پری یہ لوگ منافق ہیں جھوٹ بولتے ہیں

سبھی نےسونپا ہوا کام کرنا ہوتا ہے
ستارے روشنی کرتے ہیں کتے بھونکتے ہیں

کوئی تو فرق بھی ہو حادثات ہونے پر
خدا تو دیکھتا ہے ساتھ ہم بھی دیکھتے ہیں

جو بچے دنیا کے مکتب میں کامیاب نہ ہوں
ہم انکو دین کی خدمات کرنے بھیجتے ہیں

یہ کیسی شرطیں کہ یکطرفہ عشق تھوڑی ہے
ملیں تو کیا نہیں کرنا یہ مل کے دیکھتے ہیں

ترے قریبی ٹھرک جھاڑتے ہیں ہم پہ مگر
ہم ان کے پاس تجھے دیکھنے کو بیٹھتے ہیں

میں تیرے بعد کہیں کا نہیں رہا افکار
جہاں بھی جاؤں سبھی لوگ تیرا پوچھتے ہیں

حسین خوابوں کی صورت میں جال پھینکتے ہیں
پری یہ لوگ منافق ہیں جھوٹ بولتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں