Justoju Khoye Howon Ki Umar Bhar Karte Rahe

Justoju Khoye Howon Ki Umar Bhar Karte Rahe

Justoju Khoye Howon Ki Umar Bhar Karte Rahe
Chand ke hum rah hum har shab safar karte rahe

Rastun ka ilm tha hum ko nah simatun ki khabar
Shahr na maloom ki chahat magr karte rahe

Hum ne khud se bhi chhupaya aur sare shahr ko
Tere jane ki khabar deewar-o-dar karte rahe

Woh nah aaye ga hamein maloom tha uss sham bhi
Intizar uss ka magar kuchh soch kar karte rahe

Aaj aaya hai hamein bhi un uranun ka khayal
Jin ko tere zaam mein be baal-o-par karte rahe

Justoju khoye howon ki umar bhar karte rahe
Chand ke hum rah hum har shab safar karte rahe
غزل
جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے
چاند کے ہم راہ ہم ہر شب سفر کرتے رہے

راستوں کا علم تھا ہم کو نہ سمتوں کی خبر
شہر نامعلوم کی چاہت مگر کرتے رہے

ہم نے خود سے بھی چھپایا اور سارے شہر کو
تیرے جانے کی خبر دیوار و در کرتے رہے

وہ نہ آئے گا ہمیں معلوم تھا اُس شام بھی
انتظار اُس کا مگر کچھ سوچ کر کرتے رہے

آج آیا ہے ہمیں بھی اُن اُڑانوں کا خیال
جن کو تیرے زعم میں بے بال و پر کرتے رہے

جستجو کھوئے ہوؤں کی عمر بھر کرتے رہے
چاند کے ہم راہ ہم ہر شب سفر کرتے رہے

اپنا تبصرہ بھیجیں