Galat Nikle Sab Andaze Hamare

Ghazal:
Galat Nikle Sab Andaze Hamare
Keh din aae nahi achay hamare

Saffar se baz rehne ko kaha hai
Kisi ne khool kar tasme hamare

Har mossam bahut andar tak aya
Khole rehte thay darwaze hamare

Us abar e meharbaan se kia shikayat
Agar bartan nahi bharte hamare

Agar hum per yaqeen ata nahi tu
Kahi lagwa lo anghote hamare
غزل
غلط نکلے سب اندازے ہمارے
کہ دن آئے نہیں اچھے ہمارے

سفر سے باز رہنے کو کہا ہے
کسی نے کھول کر تسمے ہمارے

ہر اک موسم بہت اندر تک آیا
کھولے رہتے تھے دروازے ہمارے

اُس ابرِ مہربان سے کیا شکایت
اگر برتن نہیں بھرتے ہمارے

اگر ہم پر یقین آتا نہیں تو
کہیں لگوا لو انگوٹھے ہمارے

اپنا تبصرہ بھیجیں