Bol Partay Hain Ham Jo Agay Say

غزل
بول پڑتے ہیں ہم جو آگے سے
پیار بڑھتا ہے اس رویے سے
 
میں وہی ہوں یقین کرو میرا
میں جو لگتا نہیں ہوں چہرے سے
 
ہم کو نیچے اُتار لیں گے لوگ
عشق لٹکا رہے گا پنکھے سے
 
سارا کچھ لگ رہا ہے بے ترتیب
ایک شے آگے پیچھے ہونے سے
 
ویسے بھی کون سی زمینیں تھی
میں بہت خوش ہوں عاق نامے سے
 
یہ محبت وہ گھاٹ ہے جس پر
داغ لگتے ہیں کپڑے دھونے سے
 
بول پڑتے ہیں ہم جو آگے سے
پیار بڑھتا ہے اس رویہ سے
 
Ghazal
Bol Partay Hain Ham Jo Agay Say
Pyar badhta hai is raweyaa say
 
Main wohi hun yaqeen kro mera
Main jo lagta nahi hun cheheray say

Humko nichay utar leay gay log
Ishq latka rehy ga pankhy sy

Sara kuch lg raha hai bay-tartieb
Aik shay aggy peechay hony say

Wesay bhi kon se zamenay thi
Main bahut khush hun aak-namay sy

Yeh muhbbat wo ghaat hai jis per
Daag lagty hain kapray dhonay say

Bool party hain ham jo agay say
Pyar badhta hai is rawaya say

اپنا تبصرہ بھیجیں