Pahle Pahal Ladenge Tamaskhur UdaEnge

پہلے پہل لڑیں گے تمسخر اڑائیں گے
جب عشق دیکھ لیں گے تو سر پر بٹھائیں گے

تو تو پھر اپنی جان ہے تیرا تو ذکر کیا
ہم تیرے دوستوں کے بھی نخرے اٹھائیں گے

غالبؔ نے عشق کو جو دماغی خلل کہا
چھوڑیں یہ رمز آپ نہیں جان پائیں گے

پرکھیں گے ایک ایک کو لے کر تمہارا نام
دشمن ہے کون دوست ہے پہچان جائیں گے

قبلہ کبھی تو تازہ سخن بھی کریں عطا
یہ چار پانچ غزلیں ہی کب تک سنائیں گے

آگے تو آنے دیجئے رستہ تو چھوڑیئے
ہم کون ہیں یہ سامنے آ کر بتائیں گے

یہ اہتمام اور کسی کے لئے نہیں
طعنے تمہارے نام کے ہم پر ہی آئیں گے

pahle-pahal ladenge tamaskhur udaenge
jab ishq dekh lenge to sar par bithaenge

tu to phir apni jaan hai tera to zikr kya
hum tere doston ke bhi nakhre uthaenge

ghaalib’ ne ishq ko jo dimaghi khalal kaha
chhoden ye ramz aap nahin jaan paenge

parkhenge ek ek ko le kar tumhaara nam
dushman hai kaun dost hai pahchan jaenge

qibla kabhi to taza-sukhan bhi karen ata
ye chaar-panch ghazlen hi kab tak sunaenge

aage to aane dijiye rasta to chhodiye
hum kaun hain ye samne aa kar bataenge

ye ehtimam aur kisi ke liye nahin
tane tumhaare nam ke hum par hi aaenge

اپنا تبصرہ بھیجیں