Mat Qatl Karo Aawazon Ko

نظم:مت قتل کرو آوازوں کو
تم اپنے عقیدوں کے نیزے
ہر دل میں اتارے جاتے ہو

ہم لوگ محبت والے ہیں
تم خنجر کیوں لہراتے ہو

اس شہر میں نغمے بہنے دو
بستی میں ہمیں بھی رہنے دو

ہم پالنہار ہیں پھولوں کے
ہم خوشبو کے رکھوالے ہیں

تم کس کا لہو پینے آئے
ہم پیار سکھانے والے ہیں

اس شہر میں پھر کیا دیکھو گے
جب حرف یہاں مر جائے گا

جب تیغ پہ لے کٹ جائے گی
جب شعر سفر کر جائے گا

جب قتل ہوا سر سازوں کا
جب کال پڑا آوازوں کا

جب شہر کھنڈر بن جائے گا
پھر کس پر سنگ اٹھاؤ گے

اپنے چہرے آئینوں میں
جب دیکھو گے ڈر جاؤ گے

Nazam:Mat Qatl Karo Aawazon Ko
tum apne aqidon ke neze
har dil mein utare jate ho
 
hum log mohabbat wale hain
tum khanjar kyun lahraate ho
 
is shahr mein naghme bahne do
basti mein hamein bhi rahne do
 
hum palanhaar hain phulon ke
hum khushbu ke rakhwale hain
 
tum kis ka lahu pine aae
hum pyar sikhane wale hain
 
is shahr mein phir kya dekhoge
jab harf yahan mar jaega
 
jab tegh pe lai kat jaegi
jab sher safar kar jaega
 
jab qatl hua sur sazon ka
jab kal pada aawazon ka
 
jab shahr khandar ban jaega
phir kis par sang uthaoge
 
apne chehre aainon mein
jab dekhoge dar jaoge

اپنا تبصرہ بھیجیں