Ek Darkwhast

نظم:ایک درخواست
زندگی کے جتنے دروازے ہیں مجھ پہ بند ہیں
دیکھنا حد نظر سے آگے بڑھ کر دیکھنا بھی جرم ہے
سوچنا اپنے عقیدوں اور یقینوں سے نکل کر سوچنا بھی جرم ہے
آسماں در آسماں اسرار کی پرتیں ہٹا کر جھانکنا بھی جرم ہے
کیوں بھی کہنا جرم ہے کیسے بھی کہنا جرم ہے
سانس لینے کی تو آزادی میسر ہے مگر
زندہ رہنے کے لیے انسان کو کچھ اور بھی درکار ہے
اور اس کچھ اور بھی کا تذکرہ بھی جرم ہے
اے خداوندان ایوان عقائد
اے ہنر مندان آئین و سیاست
زندگی کے نام پر بس اک عنایت چاہیۓ
مجھ کو ان سارے جرائم کی اجازت چاہیۓ
Nazam:Ek darkwhast
Zindagi Ke Jitne Darwaze Hain Mujh Pe Band Hain
dekhna hadd-e-nazar se aage badh kar dekhna bhi jurm hai
 
sochna apne aqidon aur yaqinon se nikal kar sochna bhi jurm hai
aasman-dar-asman asrar ki parten hata kar jhankna bhi jurm hai
 
kyun bhi kahna jurm hai kaise bhi kahna jurm hai
sans lene ki to aazadi mayassar hai magar
 
zinda rahne ke liye insan ko kuchh aur bhi darkar hai
aur is kuchh aur bhi ka tazkira bhi jurm hai
 
ai khudawandan-e-aiwan-e-aqaed
ai hunar-mandan-e-ain-o-siyasat
 
zindagi ke nam par bas ek inayat chahiye
mujh ko in sare jaraem ki ijazat chahiye

اپنا تبصرہ بھیجیں