Ishq Aisa Ajeeb Darya Hai

عشق ایسا عجیب دریا ہے
جو بنا ساحلوں کے بہتا ہے
مغتنم ہیں یہ چار لمحے بھی
پھر نہ ہم ہیں نہ یہ تماشا ہے
اے سرابوں میں گھومنے والے
دل کے اندر بھی ایک رستہ ہے
زندگی اک دکاں کھلونوں کی
وقت بگڑا ہوا سا بچہ ہے
اس بھری کائنات کے ہوتے
آدمی کس قدر اکیلا ہے
آئینے میں جو عکس ہے امجدؔ
کیوں کسی دوسرے کا لگتا ہے
Ishq Aisa Ajib Dariya Hai
jo bina sahilon ke bahta hai
 
mughtanim hain ye chaar lamhe bhi
phir na hum hain na ye tamasha hai
 
ai sarabon mein ghumne wale
dil ke andar bhi ek rasta hai
 
zindagi ek dukan khilaunon kei
waqt bigda hua sa bachcha hai
 
is bhari kaenat ke hote
aadmi kis qadar akela hai
 
aaine mein jo aks hai ‘amjad’
kyon kisi dusre ka lagta hai

اپنا تبصرہ بھیجیں