Aankhon Ka Rang Baat Ka Lehja Badal Gaya

Aankhon Ka Rang Baat Ka Lehja Badal Gaya

Aankhon Ka Rang Baat Ka Lehja Badal Gaya
Wo shakhs aik shaam mein kitna badal gaya

Kuch din tou mera aks raha aaine pe naqsh
Phir youn howa khud mera chehra badal gaya
 
Koi bhi cheez apni jagha per nahi rahi
Jatay hi aik shakhs ke kia kia badal gaya
 
Uth kar chala gaya koi waqfay ke darmiyan
Parda utha tou sara tamasha badal gaya
 
Hariyat se sare lafz usay dekhtay rahay
Baaton mein wo apni baat ko kaisa badal gaya
 
Apni gali mein apna hi ghar dhundhte hain log
Amjad yeh kon sheher ka naqsha badal gaya
 
Aankhon ka rang baat ka lehja badal gaya
Wo shakhs aik shaam mein kitna badal gaya
غزل
آنکھوں کا رنگ بات کا لہجہ بدل گیا
وہ شخص ایک شام میں کتنا بدل گیا
 
کچھ دن تو میرا عکس رہا آئینے پے نقش
پھر یوں ہوا خود میرا چہرہ بدل گیا
 
کوئی بھی چیز اپنی جگہ پر نہیں رہی
جاتے ہی ایک شخص کے کیا کیا بدل گیا
 
اٹھ کر چلا گیا کوئی وقفے کے درمیاں
پردہ اٹھا تو سارا تماشہ بدل گیا
 
حیرت سے سارے لفظ اُسے دیکھتے رہے
باتوں میں وہ اپنی بات کو کیسا بدل گیا
 
اپنی گلی میں اپنا ہی گھر ڈھونڈتے ہیں لوگ
امجدؔ یہ کون شہر کا نقشہ بدل گیا
 
آنکھوں کا رنگ بات کا لہجہ بدل گیا
وہ شخص ایک شام میں کتنا بدل گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں