Sukhan-E-Haq Ko Fazelat Nahi Milne Wali

Sukhan-E-Haq Ko Fazelat Nahi Milne Wali

Sukhan-E-Haq Ko Fazelat Nahi Milne Wali
Sabr par dad shujaat nahi milne wali

Waqt malom ki dehshat se larzata howa dil
Doba jata hai keh mohlat nahi milne wali

Zindagi nazr guzari tu mili chardar-e-khak
Es se km par tou yeh nemat nahi milne wali

Raas ane lagi duniya tou kaha dil ne keh jaa
Ab tujhe dard ki daulat nahi milne wali

Hawas laqma-e-tar khaa gai lehje ka jalal
Ab kisi harf ko hurmat nahi milne wali

Ghar se niklay howay baiton ka muqadar malom
Maa ke qadmo mein bhi jannt nahi milne wali

Zindagi bhar ki kamai yahi misray do char
Es kamai pe tou izzat nahi milne wali

Sukhan-e-haq ko fazelat nahi milne wali
Sabr par dad shujaat nahi milne wali
غزل
سخن حق کو فضیلت نہیں ملنے والی
صبر پر داد شجاعت نہیں ملنے والی

وقت معلوم کی دہشت سے لرزتا ہوا دل
ڈوبا جاتا ہے کہ مہلت نہیں ملنے والی

زندگی نذر گزاری تو ملی چادر خاک
اس سے کم پر تو یہ نعمت نہیں ملنے والی

راس آنے لگی دنیا تو کہا دل نے کہ جا
اب تجھے درد کی دولت نہیں ملنے والی

ہوس لقمۂ تر کھا گئی لہجے کا جلال
اب کسی حرف کو حرمت نہیں ملنے والی

گھر سے نکلے ہوئے بیٹوں کا مقدر معلوم
ماں کے قدموں میں بھی جنت نہیں ملنے والی

زندگی بھر کی کمائی یہی مصرعے دو چار
اس کمائی پہ تو عزت نہیں ملنے والی

سخن حق کو فضیلت نہیں ملنے والی
صبر پر داد شجاعت نہیں ملنے والی

اپنا تبصرہ بھیجیں