Aaina Ab Juda Nahi Karta

Aaina Ab Juda Nahi Karta

Aaina Ab Juda Nahi Karta
Qaid mein hoon rihaa nahi karta

Mustaqil sabar mein hain koh-e-giran
Naqsh ebrat sada nahi karta

Rang-e-mehfil badlta rehta hai
Rang koi wafa nahi karta

Aish-e-dunyia ki justaju mat kar
Yeh dafina mila nahi karta

Jee mein aye jo kar guzarta hai
Tou kisi ka kaha nahi karta

 Aik waris hamesha hota hai
Takhat kahli raha nahi karta

Ehd-e-insaf a raha hai munir
Zulm daim howa nahi karta

Aaina ab juda nahi karta
Qaid mein hoon rihaa nahi karta
غزل
آئینہ اب جدا نہیں کرتا
قید میں ہوں رہا نہیں کرتا

مستقل صبر میں ہے کوہ گراں
نقش عبرت صدا نہیں کرتا

رنگ محفل بدلتا رہتا ہے
رنگ کوئی وفا نہیں کرتا

عیش دنیا کی جستجو مت کر
یہ دفینہ ملا نہیں کرتا

جی میں آئے جو کر گزرتا ہے
تو کسی کا کہا نہیں کرتا

ایک وارث ہمیشہ ہوتا ہے
تخت خالی رہا نہیں کرتا

عہد اںصاف آرہا ہے منیرؔ
ظلم دائم ہوا نہیں کرتا

آئینہ اب جدا نہیں کرتا
قید میں ہوں رہا نہیں کرتا

اپنا تبصرہ بھیجیں