Na Neend Aur Na Khawabon Se Aankh Bharni Hai

Na Neend Aur Na Khawabon Se Aankh Bharni Hai

Na Neend Aur Na Khawabon Se Aankh Bharni Hai
Keh us se hum nay tujhe dekhne ki karni hai

Kisi darakht ki hidat mein din guzarana hai
Kisi chiragh ki chhaon mein raat karni hai

Wo phool aur kisi shakh par nahi Khilna
Wo zulf sirf mere hath se sanwarni hai

Tamam nakhuda sahil se door ho jayen
Samandron se akele mein bat karni hai

Hamare gaon ka har phool marne wal hai
Ab se gali se wo khushbo nahi guzarni hai

Tere zayan peh mein apna zayan na kar baithon
Keh mujh mured ka murshid awais qarni hai

Na neend aur na khawabon se aankh bharni hai
Keh us se hum nay tujhe dekhne ki karni hai
غزل
نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے
کہ اس سے ہم نے تجھے دیکھنے کی کرنی ہے

کسی درخت کی حدت میں دن گزرانا ہے
کسی چراغ کی چھاوں میں رات کرنی ہے

وہ پھول اور کسی شاخ پر نہیں کھلنا
وہ زلف صرف مرے ہاتھ سے سنورنی ہے

تمام ناخدا ساحل سے دور ہو جائیں
سمندروں سے اکیلے میں بات کرنی ہے

ہمارے گاؤں کا ہر پھول مرنے والا ہے
اب سے گلی سے وہ خوشبو نہیں گزرنی ہے

ترے زیاں پہ میں اپنا زیاں نہ کر بیٹھوں
کہ مجھ مرید کا مرشد اویس قرنی ہے

نہ نیند اور نہ خوابوں سے آنکھ بھرنی ہے
کہ اس سے ہم نے تجھے دیکھنے کی کرنی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں