Kabhi Kabhi Dil Yeh Sochta Hai

Kabhi Kabhi Dil Yeh Sochta Hai

Kabhi Kabhi Dil Yeh Sochta Hai
Na jaane hum be yaqeen logon ko naam-e-haider se rabt kyu hai

Hakeem jane wo kaise hikmat se aashna tha
Shajie jaane keh badar-o-khaiber ki fatah mandi ka raaz kya tha
Alem jaane wo ilm ke kon se safinon ka na khuda tha

Mujhe tou bas sirf yeh khabar hai
Wo mere maula ki khushbuon mein richa basa tha
Wo un ke daman aatafat mein palaa barha tha

Aur us ke din raat mere aaqa ke chashm-o-abro-o-junbish lab ke muntazir thay
Wo raat ko dushmanon ke narghe mein so raha tha tou un ko khatir
Jaddaal mein sar se paon tak surkh ho raha tha tu un ki khatir

So us ko mehbob jaanta hoon
So us ko maqsood manta hoon
Saadatein us ke naam se hain
Mohabbatein us ke naam se hain
Mohabbaton ke sabhi gharaanon ki nisbatien us ke naam se hain
نظم
کبھی کبھی دل یہ سوچتا ہے
نہ جانے ہم بے یقین لوگوں کو نام حیدر سے ربط کیوں ہے

حکیم جانے وہ کیسی حکمت سے آشنا تھا
شجیع جانے کہ بدر و خیبر کی فتح مندی کا رازکیا تھا
علیم جانے وہ علم کے کون سے سفینوں کا نا خدا تھا

مجھے تو بس صرف یہ خبر ہے
وہ میرے مولا کی خوشبووں میں رچا بسا تھا
وہ ان کےدامان عاطفت میں پلا بڑھا تھا

اور ان کے دن رات میرے آقا کے چشم و ابرو و جنبش لب کے منتظر تھے
وہ رات کو دشمنوں کے نرغے میں سو رہا تھا تو ان کو خاطر
جدال میں سر سے پاؤں تک سرخ ہو رہا تھا تو ان کی خاطر

سو اس کو محبوب جانتا ہوں
سو اس کو مقصود مانتا ہوں
سعادتیں اس کے نام سے ہیں
محبتیں اس کے نام سے ہیں
محبتوں کے سبھی گھرانوں کے نسبتیں اس کے نام سے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں