Bhul Sakta Hai Unhen Koi Bhi Aise Kaise

غزل

بھول سکتا ہے انہیں کوئی بھی ایسے کیسے
رفتگاں دل میں بسا کرتے ہیں کیسے کیسے

جان لے کر بھی اگر خوش نہیں ہونے والا
کوئی بتلائے وہ پھر مانے گا ویسے کیسے

ہنستے ہنستے وہ جدائی کو بھی سہہ جائے گا
زندہ رہ پائیں گے لیکن مرے جیسے کیسے

وہ تو انمول ہے نایاب ہے اکلوتا ہے
اس کی تشبیہ کریں ہم کسی شے سے کیسے

یہ مرے یار کی آنکھوں میں رہا کرتی تھی
پوچھئے کچھ نہ ہوئی دوستی مے سے کیسے

زندگی یہ تری رفتار عجب طرز کی ہے
چلنا چاہیں تو چلیں ہم تری لے سے کیسے

زندگی سے تجھے بے دخل تو کر دیں جاناں
پر تو نکلے بھی تو نکلے رگ و پے سے کیسے

کس طرح کوئی بھلا دے تجھے دیکھو تو وصیؔ
مشورے ہم کو ملا کرتے ہیں کیسے کیسے
 
Ghazal
Bhul Sakta Hai Unhen Koi Bhi Aise Kaise
Raftagan dil mein basa karte hain kaise kaise

Jaan le kar bhi agar khush nahin hone wala
Koi batlae wo phir manega waise kaise

Hanste hanste wo judai ko bhi sah jaega
Zinda rah paenge lekin mere jaise kaise

Wo to anmol hai nayab hai iklauta hai
Us ki tashbih karen hum kisi shai se kaise

Ye mere yar ki aankhon mein raha karti thi
Puchhiye kuchh na hui dosti mai se kaise

Zindagi ye teri raftar ajab tarz ki hai
Chalna chahen to chalen hum teri lai se kaise

Zindagi se tujhe be-dakhl to kar den jaanan
Par tu nikle bhi to nikle rag-o-pai se kaise

Kis tarah koi bhula de tujhe dekho to ‘wasi
Mashware hum ko mila karte hain kaise kaise

اپنا تبصرہ بھیجیں