Toota Tilisam-E-Waqt To Kia Dekhta Hoon Mein

Toota Tilisam-E-Waqt To Kia Dekhta Hoon Mein

Toota Tilisam-E-Waqt To Kia Dekhta Hoon Mein
Ab tak usi jaga peh akela khara hoon mein

Yeh kashmakash alag hai keh kis kashmakash mein hoon
Aata nahi samjh mein bohat sochta hoon mein hoon

Mein ahl to nahi hoon keh dekhe koi magar
Duniya mujhe bhi dekh tera aaina hoon mein

Aksar gharoor fikar jab utra dimagh se
Mein dang reh gaya keh yeh kiya likh gaya hoon mein

Mere kalam wohi nahi hai to phri mujhe
Yeh zaam kyun nah ho keh khud apna khuda hoon mein

Mujh se nahi usay mere farad se hai umeed
Manzil se koi aur faqt rasta hoon mein

Kia faida mujhe jo palat kar jawab don
Apne liye kahan hoon bura ya bhala hoon mein

Ghafil ab aur kia hoon kisi se keh umar bhar
Awargi ki gud mein sota raha hoon mein

Kia yeh jaga hai jis ki tamanna mein aaj tak
Din raat shahr shahr bhatakta phira hoon mein

Mashaal badast ghoomte guzri hai aik umar
Ab kis ke intezar mein thehra howa hoon mein

Toota tilsam-e-waqt to kia dekhta hoon mein
Ab tak usi jaga peh akela khara hoon mein
غزل
ٹوٹا طلسم وقت تو کیا دیکھتا ہوں میں
اب تک اُسی جگہ پہ اکیلا کھڑا ہوں میں

یہ کشمکش الگ ہے کہ کس کشمکش میں ہوں
آتا نہیں سمجھ میں بہت سوچتا ہوں میں ہوں

میں اہل تو نہیں ہوں کہ دیکھے کوئی مگر
دنیا مجھے بھی دیکھ ترا آئنا ہوں میں

اکثر غرور فکر جب اُترا دماغ سے
میں دنگ رہ گیا کہ یہ کیا لکھ گیا ہوں میں

میرا کلام وحی نہیں ہے تو پھر مجھے
یہ زعم کیوں نہ ہو کہ خود اپنا خدا ہوں میں

مجھ سےنہیں اُسے مرے فردا سے ہے اُمید
منزل سے کوئی اور فقط راستہ ہوں میں

کیا فائدہ مجھے جو پلٹ کر جواب دوں
اپنے لئے کہاں ہوں برا یا بھلا ہوں میں

غافل اب اور کیا ہوں کسی سے کہ عمر بھر
آوارگی کی گود میں سوتا رہا ہوں میں

کیا یہ جگہ ہے جس کی تمنا میں آج تک
دن رات شہر شہر بھٹکتا پھرا ہوں میں

مشعل بدست گھومتے گزری ہے ایک عمر
اب کس کے انتظار میں ٹھہرا ہوا ہوں میں

ٹوٹا طلسم وقت تو کیا دیکھتا ہوں میں
اب تک اُسی جگہ پہ اکیلا کھڑا ہوں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں