Yeh Ishq Wo Hai Jis Ne Bahr-O-Bar Kharab Kar Diya

Yeh Ishq Wo Hai Jis Ne Bahr-O-Bar Kharab Kar Diya

Yeh Ishq Wo Hai Jis Ne Bahr-O-Bar Kharab Kar Diya
Hamein tou us ne jaise khas kar kharab kar diya

Mein dil peh haath rakh ke tujh ko shahr bhejdon magar
Tumhein bhi un hawaon ne agar kharab kar diya

Kisi ne naam likh kar aur kisi ne peng dal ke
Mohabbaton ki aarr mein shajar kharab kar diya

Tumhein hi dekhne mein mehv hai wo kaam chorr kar
Tumhari kaar ne tu karigar kharab kar diya

Mein qaflay ke sath hoon magar mujhe yeh khauf hai
Agar kisi ne mera humsafar kharab kar diya

Tere nazar ke maikade tamam shab khule rahe
Teri sharab ne mera jigar kharab kar diya

Yeh ishq wo hai jis ne bahr-o-bar kharab kar diya
Hamein tou us ne jaise khas kar kharab kar diya
غزل
یہ عشق وہ ہے جس نے بہرو بر خراب کر دیا
ہمیں تو اس نے جیسے خاص کر خراب کر دیا

میں دل پہ ہاتھ رکھ کے تجھ کو شہر بھیج دوں مگر
تمہیں بھی اُن ہواؤں نے اگر خراب کر دیا

کسی نے نام لکھ کر اور کسی نے پینگ ڈال کے
محبتوں کی آڑ میں شجر خراب کردیا

تمہیں ہی دیکھنے میں محو ہے وہ کام چھوڑ کر
تمہاری کار نے تو کاریگر خراب کر دیا

میں قافلے کے ساتھ ہوں مگر مجھے یہ خوف ہے
اگر کسی نے میرا ہمسفر خراب کر دیا

تیرے نظر کے میکدے تمام شب کھلے رہے
تیری شراب نے میرا جگر خراب کر دیا

یہ عشق وہ ہے جس نے بہرو بر خراب کر دیا
ہمیں تو اس نے جیسے خاص کر خراب کر دیا

اپنا تبصرہ بھیجیں