Mein Awam Mein Hoon Lekin Nahi Khoye Amiyana

Mein Awam Mein Hoon Lekin Nahi Khoye Amiyana

Mein Awam Mein Hoon Lekin Nahi Khoye Amiyana
Na amal khushamdana na sukhan khushamdana

Teri aur zindagi hai meri aur zindagi hai
Mein bulandiyon ka joya tou asir-e-ashiyana

Mujhe raas hi na aye kabhi na qisson ki sohbat
Mere jism natawan mein nahi rooh tajirana

Mere khizr ke qadam hain mujhe mashaal manazil
Mere dida talab mein hai nigha-e-mujirmana

Gham-o-rang ka chupana bhi hai kaar-e-zarf lekin
Hai khushi ko zabt karna rah-o-rasm-o-aqilana

Teri tamkanat agar hai kisi dusre ke bal par
Yeh chalan hai baghiyana yeh qadam hai mujirmana

Mujhe khaizr-e-nau ki hajat nahi rah-e-bandagi mein
Mere maslak wafa mein yeh rawish hai kafirana

Mein awam mein hoon lekin nahi khoye amiyana
Na amal khushamdana na sukhan khushamdana
غزل
میں عوام میں ہوں لیکن نہیں خوئے عامیانہ
نہ عمل خوشامدانہ نہ سخن خوشامدانہ

تری اور زندگی ہے میری اور زندگی ہے
میں بلندیوں کا جویا تو اسیر آشیانہ

مجھے راس ہی نہ آئی کبھی ناقصوں کی صحبت
مرے جسم ناتواں میں نہیں روح تاجرانہ

مرے خضر کے قدم ہیں مجھے مشعل منازل
مرے دیدہ طلب میں ہے نگاہ مجرماہ

غم و رنج کا چھپانا بھی ہے کار ظرف لیکن
ہے خوشی کو ضبط کرنا رہ و رسم عاقلانہ

تری تمکنت اگر ہے کسی دوسرے کے بل پر
یہ چلن ہے باغیانہ یہ قدم ہے مجرمانہ

مجھے خضر نو کی حاجت نہیں راہ بندگی میں
مرے مسلک وفا میں یہ روش ہے کافرانہ

میں عوام میں ہوں لیکن نہیں خوئے عامیانہ
نہ عمل خوشامدانہ نہ سخن خوشامدانہ

اپنا تبصرہ بھیجیں