Kaha Jo Mein Ne Ghalat Kar Rahi Ho Chun Ke

Kaha Jo Mein Ne Ghalat Kar Rahi Ho Chun Ke

Kaha Jo Mein Ne Ghalat Kar Rahi Ho Chun Ke Mujhe
Achanak uss ne kaha chup yeh baat sunn ke mujhe

Koi junoon hawa mein ura de mera wajood
Koi asaa ho jo roi ki tarah duhnkay mujhe

Kisi ne kehh ke jab ik haan basayadil ka jahan
Qasam khuda ki samjh aaye maani kun ke mujhe

Udharay de gir irada nhai pehenny ka
Yeh kia keh aik taraf rakh diya hai bun ke mujhe

Shajar se kaat liya hai to apni maiz bana
Agar nahi to phir aane de kaam ghun ke mujhe

Kal aik rail ki chik chik se rukan yaad aaye
Mafail, falatun, mafailun ke mujhe

Tumhare lootnay tak kuch bura nah ho gaya ho
Nah pass choorna mujh aisay bad shagoon ke mujhe

Faqeer log samjh aayen ya nah aayen, umair
Koi samjhta nahi hai siwaye unn ke mujhe

Kaha jo mein ne ghalat kar rahi ho chun ke mujhe
Achanak uss ne kaha chup yeh baat sunn ke mujhe
غزل
کہا جو میں نے غلط کر رہی ہو چُن کے مجھے
اچانک اُس نے کہا چپ یہ بات سن کے مجھے

کوئی جنون ہوا میں اُڑا دے میرا وجود
کوئی عصا ہو جو روئی کی طرح دُھنکے مجھے

کسی نے کہہ کے جب اک ہاں بسایا دل کا جہاں
قسم خدا کی سمجھ آئے معنی کن کے مجھے

اُدھیڑے دے گر اِرادہ نہیں پہننے کا
یہ کیا کہ ایک طرف رکھ دیا ہے بُن کے مجھے

شجر سے کاٹ لیا ہے تو اپنی میز بنا
اگر نہیں تو پھر آنے دے کام گھن کے مجھے

کل ایک ریل کی چک چک سے رکن یاد آئے
مفاعلً، فعلۃً، مفاعلنً کے مجھے

تمہارے لوٹنے تک کچھ بُرا نہ ہو گیا ہو
نہ پاس چھوڑنا مجھ ایسے بد شگن کے مجھے

فقیر لوگ سمجھ آئیں یا نہ آئیں ، عمیر
کوئی سمجھتا نہیں ہے سوائے اُن کے مجھے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں