Bahut Dino Se Nahi Apne Darmiyan Wo Shakhs

Ghazal
Bahut Dino Se Nahi Apne Darmiyan Wo Shakhs
Udass kar ke hamein chal diya kahan wo shakhs

Wo jis ke naqsh-e-qadam se charagh jalte thay
Jalay charagh to wo khud ban gaya dhowan wo shakhs

Qareeb tha to kaha hum ne sang dil bhi usay
Hua jo door to lagta hai jaan e jaan wo shakhs

Us aik shakhs main thiin dil rubayion kia kia
Hazar log milion gaye magar kahaan wo shakhs

Wo uska hussan e dill aara , keh chup gunaah lage
Jo be zuban thay unhain day gaya zuban wo shakhs

Yeh es liye keh chaman ki fazaa udass na ho
Raha qaid e qafas main bhi nagma khaan wo shakhs

Chupaa liye jise pat jhar ke zard pato ne
Abhi talak hai bharon pe hukmran wo shakhs

Humein to pyas kay sahra main gungonatay howaye
Dekhi data hai aik behar bikaraa wo shakhs

Qateel kaise bholaye hum ahl e dard usay
Dilion main chor gaya apni dastan wo shakhs
غزل
بہت دنوں سے نہیں اپنے درمیان وہ شخص
اُداس کر کے ہمیں چل دیا کہاں وہ شخص

وہ جس کے نقشِ قدم سے چراغ جلتے تھے
جلے چراغ تو خود بن گیا دھواں وہ شخص

قریب تھا تو کہا ہم نے سنگ دل بھی اُسے
ہوا جو دور تو لگتا ہے جانِ جان وہ شخص

اُس ایک شخص میں تھیں دل ربائیاں کیاکیا
ہزار لوگ ملیں گئے مگر کہاں وہ شخص

وہ اُس کا حسنِ دل آرا , کہ چپ گناہ لگے
جو بے زباں تھے اُنہیں دے گیا زباں وہ شخص

یہ اس لیے کہ چمن کی فضا اُداس نہ ہو
رہا ہے قیدِ قفس میں بھی نغمہ خواں وہ شخص

چھپا لیا جسے پت جھڑ کے زرد پتوں نے
ابھی تلک ہے بہاروں پہ حکمراں وہ شخص

ہمیں تو پیاس کے صحرا میں گنگناتے ہوۓ
دکھائی دیتا ہے اک بحر بیکراں وہ شخص

قتیل کیسے بھلائیں ہم اہل درد اُسے
دلوں میں چھوڑ گیا اپنی داستاں وہ شخص

اپنا تبصرہ بھیجیں