Taswir.e.dard

نظم:تصویرِ درد
نہیں منت کش تاب شنیدن داستاں میری
خاموشی گفتگو ہے بے زبانی ہے زباں میری
یہ دستور زباں بندی ہے کیسا تیری محفل میں
یہاں تو بات کرنے کو ترستی ہے زباں میری
اٹھائے کچھ ورق لالے نے کچھ نرگس نے کچھ گل نے
چمن میں ہر طرف بکھری ہوئی ہے داستاں میری
اڑا لی قمریوں نے طوطیوں نے عندلیبوں نے
چمن والوں نے مل کر لوٹ لی طرز فغاں میری
ٹپک اے شمع آنسو بن کے پروانے کی آنکھوں سے
سراپا درد ہوں حسرت بھری ہے داستاں میری
الٰہی پھر مزہ کیا ہے یہاں دنیا میں رہنے کا
حیات جاوداں میری نہ مرگ ناگہاں میری
مرا رونا نہیں رونا ہے یہ سارے گلستاں کا
وہ گل ہوں میں خزاں ہر گل کی ہے گویا خزاں میری
دریں حسرت سرا عمریست افسون جرس دارم
ز فیض دل طپیدن ہا خروش بے نفس دارم
ریاض دہر میں نا آشنائے بزم عشرت ہوں
خوشی روتی ہے جس کو میں وہ محروم مسرت ہوں
مری بگڑی ہوئی تقدیر کو روتی ہے گویائی
میں حرف زیر لب شرمندۂ گوش سماعت ہوں
پریشاں ہوں میں مشت خاک لیکن کچھ نہیں کھلتا
سکندر ہوں کہ آئینہ ہوں یا گرد کدورت ہوں
یہ سب کچھ ہے مگر ہستی مری مقصد ہے قدرت کا
سراپا نور ہو جس کی حقیقت میں وہ ظلمت ہوں
خزینہ ہوں چھپایا مجھ کو مشت خاک صحرا نے
کسی کو کیا خبر ہے میں کہاں ہوں کس کی دولت ہوں
نظر میری نہیں ممنون سیر عرصۂ ہستی
میں وہ چھوٹی سی دنیا ہوں کہ آپ اپنی ولایت ہوں
نہ صہبا ہوں نہ ساقی ہوں نہ مستی ہوں نہ پیمانہ
میں اس مے خانۂ ہستی میں ہر شے کی حقیقت ہوں
مجھے راز دو عالم دل کا آئینہ دکھاتا ہے
وہی کہتا ہوں جو کچھ سامنے آنکھوں کے آتا ہے
عطا ایسا بیاں مجھ کو ہوا رنگیں بیانوں میں
کہ بام عرش کے طائر ہیں میرے ہم زبانوں میں
اثر یہ بھی ہے اک میرے جنون فتنہ ساماں کا
مرا آئینۂ دل ہے قضا کے راز دانوں میں
رلاتا ہے ترا نظارہ اے ہندوستاں مجھ کو
کہ عبرت خیز ہے تیرا فسانہ سب فسانوں میں
دیا رونا مجھے ایسا کہ سب کچھ دے دیا گویا
لکھا کلک ازل نے مجھ کو تیرے نوحہ خوانوں میں
نشان برگ گل تک بھی نہ چھوڑ اس باغ میں گلچیں
تری قسمت سے رزم آرائیاں ہیں باغبانوں میں
چھپا کر آستیں میں بجلیاں رکھی ہیں گردوں نے
عنادل باغ کے غافل نہ بیٹھیں آشیانوں میں
سن اے غافل صدا میری یہ ایسی چیز ہے جس کو
وظیفہ جان کر پڑھتے ہیں طائر بوستانوں میں
وطن کی فکر کر ناداں مصیبت آنے والی ہے
تری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانوں میں
ذرا دیکھ اس کو جو کچھ ہو رہا ہے ہونے والا ہے
دھرا کیا ہے بھلا عہد کہن کی داستانوں میں
یہ خاموشی کہاں تک لذت فریاد پیدا کر
زمیں پر تو ہو اور تیری صدا ہو آسمانوں میں
نہ سمجھوگے تو مٹ جاؤگے اے ہندوستاں والو
تمہاری داستاں تک بھی نہ ہوگی داستانوں میں
یہی آئین قدرت ہے یہی اسلوب فطرت ہے
جو ہے راہ عمل میں گامزن محبوب فطرت ہے
ہویدا آج اپنے زخم پنہاں کر کے چھوڑوں گا
لہو رو رو کے محفل کو گلستاں کر کے چھوڑوں گا
جلانا ہے مجھے ہر شمع دل کو سوز پنہاں سے
تری تاریک راتوں میں چراغاں کر کے چھوڑوں گا
مگر غنچوں کی صورت ہوں دل درد آشنا پیدا
چمن میں مشت خاک اپنی پریشاں کر کے چھوڑوں گا
پرونا ایک ہی تسبیح میں ان بکھرے دانوں کو
جو مشکل ہے تو اس مشکل کو آساں کر کے چھوڑوں گا
مجھے اے ہم نشیں رہنے دے شغل سینہ کاوی میں
کہ میں داغ محبت کو نمایاں کر کے چھوڑوں گا
دکھا دوں گا جہاں کو جو مری آنکھوں نے دیکھا ہے
تجھے بھی صورت آئینہ حیراں کر کے چھوڑوں گا
جو ہے پردوں میں پنہاں چشم بینا دیکھ لیتی ہے
زمانے کی طبیعت کا تقاضا دیکھ لیتی ہے
کیا رفعت کی لذت سے نہ دل کو آشنا تو نے
گزاری عمر پستی میں مثال نقش پا تو نے
رہا دل بستۂ محفل مگر اپنی نگاہوں کو
کیا بیرون محفل سے نہ حیرت آشنا تو نے
فدا کرتا رہا دل کو حسینوں کی اداؤں پر
مگر دیکھی نہ اس آئینے میں اپنی ادا تو نے
تعصب چھوڑ ناداں دہر کے آئینہ خانے میں
یہ تصویریں ہیں تیری جن کو سمجھا ہے برا تو نے
سراپا نالۂ بیدار سوز زندگی ہو جا
سپند آسا گرہ میں باندھ رکھی ہے صدا تو نے
صفائے دل کو کیا آرائش رنگ تعلق سے
کف آئینہ پر باندھی ہے او ناداں حنا تو نے
زمیں کیا آسماں بھی تیری کج بینی پہ روتا ہے
غضب ہے سطر قرآں کو چلیپا کر دیا تو نے
زباں سے گر کیا توحید کا دعویٰ تو کیا حاصل
بنایا ہے بت پندار کو اپنا خدا تو نے
کنویں میں تو نے یوسف کو جو دیکھا بھی تو کیا دیکھا
ارے غافل جو مطلق تھا مقید کر دیا تو نے
ہوس بالائے منبر ہے تجھے رنگیں بیانی کی
نصیحت بھی تری صورت ہے اک افسانہ خوانی کی
دکھا وہ حسن عالم سوز اپنی چشم پر نم کو
جو تڑپاتا ہے پروانے کو رلواتا ہے شبنم کو
ذرا نظارہ ہی اے بو الہوس مقصد نہیں اس کا
بنایا ہے کسی نے کچھ سمجھ کر چشم آدم کو
اگر دیکھا بھی اس نے سارے عالم کو تو کیا دیکھا
نظر آئی نہ کچھ اپنی حقیقت جام سے جم کو
شجر ہے فرقہ آرائی تعصب ہے ثمر اس کا
یہ وہ پھل ہے کہ جنت سے نکلواتا ہے آدم کو
نہ اٹھا جذبۂ خورشید سے اک برگ گل تک بھی
یہ رفعت کی تمنا ہے کہ لے اڑتی ہے شبنم کو
پھرا کرتے نہیں مجروح الفت فکر درماں میں
یہ زخمی آپ کر لیتے ہیں پیدا اپنے مرہم کو
محبت کے شرر سے دل سراپا نور ہوتا ہے
ذرا سے بیج سے پیدا ریاض طور ہوتا ہے
دوا ہر دکھ کی ہے مجروح تیغ آرزو رہنا
علاج زخم ہے آزاد احسان رفو رہنا
شراب بے خودی سے تا فلک پرواز ہے میری
شکست رنگ سے سیکھا ہے میں نے بن کے بو رہنا
تھمے کیا دیدۂ گریاں وطن کی نوحہ خوانی میں
عبادت چشم شاعر کی ہے ہر دم با وضو رہنا
بنائیں کیا سمجھ کر شاخ گل پر آشیاں اپنا
چمن میں آہ کیا رہنا جو ہو بے آبرو رہنا
جو تو سمجھے تو آزادی ہے پوشیدہ محبت میں
غلامی ہے اسیر امتیاز ما و تو رہنا
یہ استغنا ہے پانی میں نگوں رکھتا ہے ساغر کو
تجھے بھی چاہیئے مثل حباب آبجو رہنا
نہ رہ اپنوں سے بے پروا اسی میں خیر ہے تیری
اگر منظور ہے دنیا میں او بیگانہ خو رہنا
شراب روح پرور ہے محبت نوع انساں کی
سکھایا اس نے مجھ کو مست بے جام و سبو رہنا
محبت ہی سے پائی ہے شفا بیمار قوموں نے
کیا ہے اپنے بخت خفتہ کو بیدار قوموں نے
بیابان محبت دشت غربت بھی وطن بھی ہے
یہ ویرانہ قفس بھی آشیانہ بھی چمن بھی ہے
محبت ہی وہ منزل ہے کہ منزل بھی ہے صحرا بھی
جرس بھی کارواں بھی راہبر بھی راہزن بھی ہے
مرض کہتے ہیں سب اس کو یہ ہے لیکن مرض ایسا
چھپا جس میں علاج گردش چرخ کہن بھی ہے
جلانا دل کا ہے گویا سراپا نور ہو جانا
یہ پروانہ جو سوزاں ہو تو شمع انجمن بھی ہے
وہی اک حسن ہے لیکن نظر آتا ہے ہر شے میں
یہ شیریں بھی ہے گویا بے ستوں بھی کوہ کن بھی ہے
اجاڑا ہے تمیز ملت و آئیں نے قوموں کو
مرے اہل وطن کے دل میں کچھ فکر وطن بھی ہے
سکوت آموز طول داستان درد ہے ورنہ
زباں بھی ہے ہمارے منہ میں اور تاب سخن بھی ہے
نمیگردید کو تہ رشتۂ معنی رہا کردم
حکایت بود بے پایاں بخاموشی ادا کردم
Nazam:Taswir-E-Dard
Nahin minnat-kash-e-tab-e-shunidan dastan meri
khamoshi guftugu hai be-zabani hai zaban meri
 
ye dastur-e-zaban-bandi hai kaisa teri mahfil mein
yahan to baat karne ko tarasti hai zaban meri
 
uthae kuchh waraq lale ne kuchh nargis ne kuchh gul ne
chaman mein har taraf bikhri hui hai dastan meri
 
uda li qumriyon ne tutiyon ne andalibon ne
chaman walon ne mil kar lut li tarz-e-fughan meri
 
tapak ai shama aansu ban ke parwane ki aankhon se
sarapa dard hun hasrat bhari hai dastan meri
 
ilahi phir maza kya hai yahan duniya mein rahne ka
hayat-e-jawedan meri na marg-e-na-gahan meri
 
mera rona nahin rona hai ye sare gulistan ka
wo gul hun main khizan har gul ki hai goya khizan meri
 
darin hasrat sara umrist afsun-e-jaras daram
z faiz-e-dil tapidan-ha kharosh-e-be-nafas daram
 
riyaz-e-dahr mein na-ashna-e-bazm-e-ishrat hun
khushi roti hai jis ko main wo mahrum-e-masarrat hun
 
meri bigdi hui taqdir ko roti hai goyai
main harf-e-zer-e-lab sharminda-e-gosh-e-samaat hun
 
pareshan hun main musht-e-khak lekin kuchh nahin khulta
sikandar hun ki aaina hun ya gard-e-kudurat hun
 
ye sab kuchh hai magar hasti meri maqsad hai qudrat ka
sarapa nur ho jis ki haqiqat main wo zulmat hun
 
khazina hun chhupaya mujh ko musht-e-khak-e-sahra ne
kisi ko kya khabar hai main kahan hun kis ki daulat hun
 
nazar meri nahin mamnun-e-sair-e-arsa-e-hasti
main wo chhoti si duniya hun ki aap apni wilayat hun
 
na sahba hun na saqi hun na masti hun na paimana
main is mai-khana-e-hasti mein har shai ki haqiqat hun
 
mujhe raaz-e-do-alam dil ka aaina dikhata hai
wahi kahta hun jo kuchh samne aankhon ke aata hai
 
ata aisa bayan mujh ko hua rangin-bayanon mein
ki baam-e-arsh ke tair hain mere ham-zabanon mein
 
asar ye bhi hai ek mere junun-e-fitna-saman ka
mera aaina-e-dil hai qaza ke raaz-danon mein
 
rulata hai tera nazzara ai hindostan mujh ko
ki ibrat-khez hai tera fasana sab fasanon mein
 
diya rona mujhe aisa ki sab kuchh de diya goya
likha kalk-e-azal ne mujh ko tere nauha-khwanon mein
 
nishan-e-barg-e-gul tak bhi na chhod us bagh mein gulchin
teri qismat se razm-araiyan hain baghbanon mein
 
chhupa kar aastin mein bijliyan rakkhi hain gardun ne
anadil bagh ke ghafil na baithen aashiyanon mein
 
sun ai ghafil sada meri ye aisi chiz hai jis ko
wazifa jaan kar padhte hain tair bostanon mein
 
watan ki fikr kar nadan musibat aane wali hai
teri barbaadiyon ke mashware hain aasmanon mein
 
zara dekh us ko jo kuchh ho raha hai hone wala hai
dhara kya hai bhala ahd-e-kuhan ki dastanon mein
 
ye khamoshi kahan tak lazzat-e-fariyaad paida kar
zamin par tu ho aur teri sada ho aasmanon mein
 
na samjhoge to mit jaoge ai hindostan walo
tumhaari dastan tak bhi na hogi dastanon mein
 
yahi aain-e-qudrat hai yahi uslub-e-fitrat hai
jo hai rah-e-amal mein gam-zan mahbub-e-fitrat hai
 
huwaida aaj apne zakhm-e-pinhan kar ke chhodunga
lahu ro ro ke mahfil ko gulistan kar ke chhodunga
 
jalana hai mujhe har sham-e-dil ko soz-e-pinhan se
teri tarik raaton mein charaghan kar ke chhodunga
 
magar ghunchon ki surat hun dil-e-dard-ashna paida
chaman mein musht-e-khak apni pareshan kar ke chhodunga
 
pirona ek hi tasbih mein in bikhre danon ko
jo mushkil hai to is mushkil ko aasan kar ke chhodunga
 
mujhe ai ham-nashin rahne de shaghl-e-sina-kawi mein
ki main dagh-e-mohabbat ko numayan kar ke chhodunga
 
dikha dunga jahan ko jo meri aankhon ne dekha hai
tujhe bhi surat-e-aina hairan kar ke chhodunga
 
jo hai pardon mein pinhan chashm-e-bina dekh leti hai
zamane ki tabiat ka taqaza dekh leti hai
 
kiya rifat ki lazzat se na dil ko aashna tu ne
gizari umr pasti mein misal-e-naqsh-e-pa tu ne
 
raha dil-basta-e-mahfil magar apni nigahon ko
kiya bairun-e-mahfil se na hairat-ashna tu ne
 
fida karta raha dil ko hasinon ki adaon par
magar dekhi na us aaine mein apni ada tu ne
 
tassub chhod nadan dahr ke aaina-khane mein
ye taswiren hain teri jin ko samjha hai bura tu ne
 
sarapa nala-e-bedad-e-soz-e-zindagi ho ja
sapand-asa girah mein bandh rakkhi hai sada tu ne
 
safa-e-dil ko kya aaraish-e-rang-e-talluq se
kaf-e-aina par bandhi hai o nadan hina tu ne
 
zamin kya aasman bhi teri kaj-bini pe rota hai
ghazab hai satr-e-quran ko chalipa kar diya tu ne
 
zaban se gar kiya tauhid ka dawa to kya hasil
banaya hai but-e-pindar ko apna KHuda tu ne
 
kuen mein tu ne yusuf ko jo dekha bhi to kya dekha
are ghafil jo mutlaq tha muqayyad kar diya tu ne
 
hawas baala-e-mimbar hai tujhe rangin-bayani ki
nasihat bhi teri surat hai ek afsana-khwani ki
 
dikha wo husn-e-alam-soz apni chashm-e-pur-nam ko
jo tadpata hai parwane ko rulwata hai shabnam ko
 
zara nazzara hi ai bul-hawas maqsad nahin us ka
banaya hai kisi ne kuchh samajh kar chashm-e-adam ko
 
agar dekha bhi us ne sare aalam ko to kya dekha
nazar aai na kuchh apni haqiqat jam se jam ko
 
shajar hai firqa-arai tassub hai samar us ka
ye wo phal hai ki jannat se nikalwata hai aadam ko
 
na uttha jazba-e-khurshid se ek barg-e-gul tak bhi
ye rifat ki tamanna hai ki le udti hai shabnam ko
 
phira karte nahin majruh-e-ulfat fikr-e-darman mein
ye zakhmi aap kar lete hain paida apne marham ko
 
mohabbat ke sharar se dil sarapa nur hota hai
zara se bij se paida riyaz-e-tur hota hai
 
dawa har dukh ki hai majruh-e-tegh-e-arzu rahna
ilaj-e-zakhm hai aazad-e-ehsan-e-rafu rahna
 
sharab-e-be-khudi se ta-falak parwaz hai meri
shikast-e-rang se sikha hai main ne ban ke bu rahna
 
thame kya dida-e-giryan watan ki nauha-khwani mein
ibaadat chashm-e-shair ki hai har dam ba-wazu rahna
 
banaen kya samajh kar shakh-e-gul par aashiyan apna
chaman mein aah kya rahna jo ho be-abru rahna
 
jo tu samjhe to aazadi hai poshida mohabbat mein
ghulami hai asir-e-imtiyaz-e-ma-o-tu rahna
 
ye istighna hai pani mein nigun rakhta hai saghar ko
tujhe bhi chahiye misl-e-habab-e-abju rahna
 
na rah apnon se be-parwa isi mein khair hai teri
agar manzur hai duniya mein o begana-khu rahna
 
sharab-e-ruh-parwar hai mohabbat nau-e-insan ki
sikhaya is ne mujh ko mast be-jam-o-subu rahna
 
mohabbat hi se pai hai shifa bimar qaumon ne
kiya hai apne bakht-e-khufta ko bedar qaumon ne
 
bayaban-e-mohabbat dasht-e-ghurbat bhi watan bhi hai
ye virana qafas bhi aashiyana bhi chaman bhi hai
 
mohabbat hi wo manzil hai ki manzil bhi hai sahra bhi
jaras bhi karwan bhi rahbar bhi rahzan bhi hai
 
maraz kahte hain sab is ko ye hai lekin maraz aisa
chhupa jis mein ilaj-e-gardish-e-charkh-e-kuhan bhi hai
 
jalana dil ka hai goya sarapa nur ho jaana
ye parwana jo sozan ho to sham-e-anjuman bhi hai
 
wahi ek husn hai lekin nazar aata hai har shai mein
ye shirin bhi hai goya be-sutun bhi kohkan bhi hai
 
ujada hai tamiz-e-millat-o-ain ne qaumon ko
mere ahl-e-watan ke dil mein kuchh fikr-e-watan bhi hai
 
sukut-amoz tul-e-dastan-e-dard hai warna
zaban bhi hai hamare munh mein aur tab-e-sukhan bhi hai
 
nami-gardid ko tah rishta-e-mani riha kardam
hikayat bud be-payan ba-khamoshi ada kardam

اپنا تبصرہ بھیجیں