Dosti Ka Hath

نظم:دوستی کا ہاتھ
گزر گئے کئی موسم کئی رتیں بدلیں
اداس تم بھی ہو یارو اداس ہم بھی ہیں
فقط تمہیں کو نہیں رنج چاک دامانی
کہ سچ کہیں تو دریدہ لباس ہم بھی ہیں
تمہارے بام کی شمعیں بھی تابناک نہیں
مرے فلک کے ستارے بھی زرد زرد سے ہیں
تمہارے آئنہ خانے بھی زنگ آلودہ
مرے صراحی و ساغر بھی گرد گرد سے ہیں
نہ تم کو اپنے خد و خال ہی نظر آئیں
نہ میں یہ دیکھ سکوں جام میں بھرا کیا ہے
بصارتوں پہ وہ جالے پڑے کہ دونوں کو
سمجھ میں کچھ نہیں آتا کہ ماجرا کیا ہے
نہ سرو میں وہ غرور کشیدہ قامتی ہے
نہ قمریوں کی اداسی میں کچھ کمی آئی
نہ کھل سکے کسی جانب محبتوں کے گلاب
نہ شاخ امن لئے فاختہ کوئی آئی
تمہیں بھی ضد ہے کہ مشق ستم رہے جاری
ہمیں بھی ناز کہ جور و جفا کے عادی ہیں
تمہیں بھی زعم مہا بھارتا لڑی تم نے
ہمیں بھی فخر کہ ہم کربلا کے عادی ہیں
ستم تو یہ ہے کہ دونوں کے مرغزاروں سے
ہوائے فتنہ و بوئے فساد آتی ہے
الم تو یہ ہے کہ دونوں کو وہم ہے کہ بہار
عدو کے خوں میں نہانے کے بعد آتی ہے
تو اب یہ حال ہوا اس درندگی کے سبب
تمہارے پاؤں سلامت رہے نہ ہاتھ مرے
نہ جیت جیت تمہاری نہ ہار ہار مری
نہ کوئی ساتھ تمہارے نہ کوئی ساتھ مرے
ہمارے شہروں کی مجبور و بے نوا مخلوق
دبی ہوئی ہے دکھوں کے ہزار ڈھیروں میں
اب ان کی تیرہ نصیبی چراغ چاہتی ہے
جو لوگ نصف صدی تک رہے اندھیروں میں
چراغ جن سے محبت کی روشنی پھیلے
چراغ جن سے دلوں کے دیار روشن ہوں
چراغ جن سے ضیا امن و آشتی کی ملے
چراغ جن سے دیئے بے شمار روشن ہوں
تمہارے دیس میں آیا ہوں دوستو اب کے
نہ ساز و نغمہ کی محفل نہ شاعری کے لئے
اگر تمہاری انا ہی کا ہے سوال تو پھر
چلو میں ہاتھ بڑھاتا ہوں دوستی کے لئے
Nazam:Dosti Ka Hath
Guzar Gae Kai Mausam Kai Ruten Badlin
udas tum bhi ho yaro udas hum bhi hain
 
faqat tumhin ko nahin ranj-e-chaak-damani
ki sach kahen to darida-libas hum bhi hain
 
tumhaare baam ki shamen bhi tabnak nahin
mere falak ke sitare bhi zard zard se hain
 
tumhaare aaina khane bhi zang-aluda
mere surahi o saghar bhi gard gard se hain
 
na tum ko apne khad-o-khal hi nazar aaen
na main ye dekh sakun jam mein bhara kya hai
 
basaraton pe wo jale pade ki donon ko
samajh mein kuchh nahin aata ki majra kya hai
 
na sarw mein wo ghurur-e-kashida-qamati hai
na qumriyon ki udasi mein kuchh kami aai
 
na khil sake kisi jaanib mohabbaton ke gulab
na shakh-e-amn liye fakhta koi aai
 
tumhein bhi zid hai ki mashq-e-sitam rahe jari
hamein bhi naz ki jaur-o-jafa ke aadi hain
 
tumhein bhi zoam maha-bhaarta ladi tum ne
hamein bhi fakhr ki hum karbala ke aadi hain
 
sitam to ye hai ki donon ke margh-zaron se
hawa-e-fitna o bu-e-fasad aati hai
 
alam to ye hai ki donon ko wahm hai ki bahaar
adu ke khun mein nahane ke baad aati hai
 
to ab ye haal hua is darindagi ke sabab
tumhaare panw salamat rahe na hath mere
 
na jit jit tumhaari na haar haar meri
na koi sath tumhaare na koi sath mere
 
hamare shahron ki majbur o be-nawa makhluq
dabi hui hai dukhon ke hazar dheron mein
 
ab un ki tira-nasibi charagh chahti hai
jo log nisf sadi tak rahe andheron mein
 
charagh jin se mohabbat ki raushni phaile
charagh jin se dilon ke dayar raushan hon
 
charagh jin se ziya amn-o-ashti ki mile
charagh jin se diye be-shumar raushan hun
 
tumhaare des mein aaya hun dosto ab ke
na saz-o-naghma ki mahfil na shairi ke liye
 
agar tumhaari ana hi ka hai sawal to phir
chalo main hath badhata hun dosti ke liye

اپنا تبصرہ بھیجیں