Tauba Ki Nazishon Pe Sitam Dha Ke Pi Gaya

شاعر:احسان دانش
غزل
توبہ کی نازشوں پہ ستم ڈھا کے پی گیا
”پی”! اس نے جب کہا تو میں گھبرا کے پی گیا

دل ہی تو ہے اٹھائے کہاں تک غم و الم
میں روز کے ملال سے اکتا کے پی گیا

تھیں لاکھ گرچہ محشر و مرقد کی الجھنیں
گتھی کو ضبط شوق کی سلجھا کے پی گیا

مے خانۂ بہار میں مدت کا تشنہ لب
ساقی خطا معاف! خطا کھا کے پی گیا

نیت نہیں خراب نہ عادی ہوں اے ندیم!
”آلام روزگار سے تنگ آ کے پی گیا”!

ساقی کے حسن دیدۂ میگوں کے سامنے
میں جلوۂ بہشت کو ٹھکرا کے پی گیا

اٹھا جو ابر دل کی امنگیں چمک اٹھیں
لہرائیں بجلیاں تو میں لہرا کے پی گیا

دل کچھ ثبوت حفظ شریعت نہ دے سکا
ساقی کے لطف خاص پہ اترا کے پی گیا

 Ghazal
Tauba Ki Nazishon Pe Sitam Dha Ke Pi Gaya
Pi! us ne jab kaha to main ghabra ke pi gaya

Dil hi to hai uthae kahan tak gham-o-alam
Main roz ke malal se ukta ke pi gaya

Thin lakh garche mahshar o marqad ki uljhanen
Gutthi ko zabt-e-shauq ki suljha ke pi gaya

Mai-khana-e-bahaar mein muddat ka tishna-lab
Saqi khata-muaf! khata kha ke pi gaya

Niyyat nahin kharab na aadi hun ai nadim!
Aalam-e-rozgar se tang aa ke pi gaya!

Saqi ke husn-e-dida-e-mai-gun ke samne
Main jalwa-e-bahisht ko thukra ke pi gaya

Uttha jo abr dil ki umangen chamak uthin
Lahrain bijliyan to main lahra ke pi gaya

Dil kuchh subut-e-hifz-e-shariat na de saka
Saqi ke lutf-e-khas pe itra ke pi gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں