Nahi Hai Zarf Yahan Itna Har Kisi Ke Pass

Nahi Hai Zarf Yahan Itna Har Kisi Ke Pass

Nahi Hai Zarf Yahan Itna Har Kisi Ke Pass
Keh saya bantay agar hai shajar kisi ke pass

Har aik shakhs khuda ke diye peh razi hai
Hai la makani kahin par to ghar kisi ke pass

Thay mere khawab amanat thay kisi ki aankhon mein
Mein girwi rakh ke chali aai zar kisi ke pass

Yeh sab zaroof laba lab bharay hain nafrat se
To kia khuloos nahi hai idhar kisi ke pass

Basarten hain muyassar baseeraton ke baghair
Nahi hai dekhne wali nazar kisi ke pass

Tumhein to zeist bare faiday ki cheez rahi
Yahan khasaray rahe umar bhar kisi ke pass

Nahi hai zarf yahan itna har kisi ke pass
Keh saya bantay agar hai shajar kisi ke pass
غزل
نہیں ہے ظرف یہاں اتنا ہر کسی کے پاس
کہ سایہ بانٹے اگر ہے شجر کسی کے پاس

ہر ایک شخص خدا کے دئیے پہ راضی ہے
ہے لا مکانی کہیں پر ، تو گھر کسی کے پاس

تھے میرے خواب امانت تھے کسی کی آنکھوں میں
میں گروی رکھ کے چلی آئی زر کسی کے پاس

یہ سب ظروف لبا لب بھرے ہیں نفرت سے
تو کیا خلوص نہیں ہے اِدھر کسی کے پاس

بصارتیں ہیں میسر بصیرتوں کے بغیر
نہیں ہے دیکھنے والی نظر کسی کے پاس

تمہیں تو زیست بڑے فائدے کی چیز رہی
یہاں خسارے رہے عمر بھر کسی کے پاس

نہیں ہے ظرف یہاں اتنا ہر کسی کے پاس
کہ سایہ بانٹے اگر ہے شجر کسی کے پاس
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں