Youn Na Mil Mujh Se Khafa Ho Jaise

Youn Na Mil Mujh Se Khafa Ho Jaise

Youn Na Mil Mujh Se Khafa Ho Jaise
Sath chal moj-e-saba ho jaise

Log youn dekh ke hans detay hain
Tu mujhe bhol gaya ho jaise
 
Ishq ko shirk ki had tak na barha
Youn na Choup ham se khuda ho jaise
 
Muat bhi aye tu es naaz ke sath
Mujh pe ehsaan kya ho jaise
 
Hichkian raat ko aati hi gayen
Tu ne phir yaad kia ho jaise
 
Aise anjan banay baithe ho
Tum ko kuch bhi na pata ho jaise
 
Zindagi beet rahi hai Danish
Ek be-juram saza ho jaise
 
Youn na mil mujh se khafa ho jaise
Sath chal moj-e-saba ho jaise
غزل
یُوں نہ مِل مجھ سے خفا ہو جیسے
ساتھ چل موجِ صبا ہو جیسے
 
لوگ یُوں دیکھ کے ہنس دیتے ہیں
تو مجھے بھول گیا ہو جیسے 
 
عشق کو شرک کی حد تک نہ بڑھا
یوں نہ چھپ ہم سے خدا ہو جیسے
 
موت بھی آئے تو اس ناز کے ساتھ
مجھ پہ احسان کیا ہو جیسے
 
ہچکیاں رات کو آتی ہی گیئں
تو نے پھر یاد کیا ہو جیسے
 
ایسے انجام بنے بیٹھے ہو
تم کو کچھ بھی نہ پتا ہو جیسے
 
زندگی بیت رہی ہے دانش
ایک بے جرم سزا ہو جیسے
 
یُوں نہ مِل مجھ سے خفا ہو جیسے
ساتھ چل موجِ صبا ہو جیسے
Poet: Ehsan Danish

اپنا تبصرہ بھیجیں