Idher Udher Lakhon Baatin

Idher Udher Lakhon Baatin

Idher Udher Lakhon Baatin
Asal jo thi wohi baat na ki

Bahot fasane dunyia bhar ke
Asli kahani yaad na thi

Wohi shanasa aankhen jin mein
Meri koi pehchan na thi

Wohi golabi hont thay jin per
Mere liye muskan na thi

Us ke bad bahot din thehra
Us anjani basti mein

Bahot dino tak khak odai
Us meda-e-hasti mein

Us ke siwa bhi log bahot thay
Hassan ke jalaye aur bhi thay

Wo bhi ham se nahi mila phir
Ham bhi us se nahi milay

Idher udher lakhon baatin
Asal jo thi wohi baat na ki
غزل
اِدھر اُدھر لاکھوں باتیں
اصل جو تھی وہی بات نہ کی

بہت فسانے دنیا بھر کے
اصلی کہانی یاد نہ تھی

وہی شناسا آنکھیں جن میں
میری کوئی پہچان نہ تھی

وہی گلابی ہونٹ تھے جن پر
میرے لیے مسکان نہ تھی

اُس کے بعد بہت دن ٹھہرا
اُس انجانی بستی میں

بہت دنوں تک خاک اڑائی
اُس میدان ہستی میں

اُس کے سوا بھی لوگ بہت تھے
حُسن کے جلوے اور بھی تھے

اپنا تبصرہ بھیجیں