Jo Hamare Mureed Ho Jayen| Afkar Alvi poetry

Jo Hamare Mureed Ho Jayen| Afkar Alvi poetry

Jo Hamare Mureed Ho Jayen
Peer khwaja fareed ho jayen

Inn dinon sab ko hum muyassar hain
Aayen aur mostafeed ho jayen

Yeh muslamano ko sahulat hai
Kuch bhi kar ke Shaheed ho jayen

Matha sajdon se daghdar kiya
Ta-keh dhabay raseed ho jayen

Yahi insanon ki taharat hai
Khwab dekhein paleed ho jayen

Momino kofiyon se behtar hai
Khule lafzon yazeed ho jayen

Hans le thora mazeed hans le yar
Ta-keh dukh bhi mazeed ho jayen

Jo hamare mureed ho jayen
Peer khwaja fareed ho jayen
غزل
جو ہمارے مُرید ہو جائیں
پیر خواجہ فرید ہو جائیں

ان دنوں سب کو ہم میسر ہیں
آئیں اور مستفید ہو جائیں

یہ مسلمانوں کو سہولت ہے
کچھ بھی کر کے شہید ہو جائیں

ماتھا سجدوں سے داغدار کیا
تا کہ دھبے رسید ہو جائیں

یہی انسانوں کی طہارت ہے
خواب دیکھیں پلید ہو جائیں

مومنو کوفیوں سے بہتر ہے
کھلے لفظوں یزید ہو جائیں

ہنس لے تھوڑا مزید ہنس لے یار
تا کہ دکھ بھی مزید ہو جائیں

جو ہمارے مُرید ہو جائیں
پیر خواجہ فرید ہو جائیں

اپنا تبصرہ بھیجیں