Jab Say Us Nay Khencha Hai Khidki Ka Parda Aik Taraf

غزل
جب سے اُس نے کھنیچا ہے کھڑکی کا پردہ اک طرف
اُس کا کمرہ ایک طرف باقی دنیا ایک طرف

میں نے آج تک جتنے بھی لوگوں میں خود کو بانٹا ہے
بچپن سے رکھتا آیا ہوں تیرا حصہ ایک طرف

ایک طرف مجھ کو جلدی اُس کے دل میں گھر کرنے کی
ایک طرف وہ کر دیتا ہے رفتہ رفتہ ایک طرف

یوں تو آج بھی تیرا دکھ دل دہلا دیتا ہے لیکن
تجھ سے جدا ہونے کا پہلا ہفتہ ایک طرف

اُس کی آنکھوں نے مجھ سے میری خوداری چھین لی ورنہ
پاؤں کی ٹھوکر سے کر دیتا تھا میں دنیا ایک طرف

میری مرضی تھی میں زرے چنتا یا نہریں چنتا
اُس نے دریا ایک طرف رکھا تھا صحرا ایک طرف
Ghazal
Jab Say Us Nay Khencha Hai Khidki Ka Parda Aik Taraf
Us ka kamra aik taraf baki duniya aik taraf

Main nay aj tak jitnay bhi logo main khud ko banta hai
Bachpan sy rakhta aya hun tera hisa aik taraf

Aik taraf mujh ko jaldi hai us ky dil main ghar karny ki
Aik taraf wo kar deta hai rafta rafta aik taraf

Youn to aj bhi tera dukh dil dhela deta hai liken
Tujhse juda hony ka pehla hafta aik taraf

Us ki aankhon nay mujh sy meri khudari cheen le warna
Paon ki thokar sy kar deta tha main duniya aik taraf

Meri marzi thi main zaray chunta ya nehren chunta
Us ny darya aik taraf rakha tha sehra aik taraf

اپنا تبصرہ بھیجیں