Agar To Kaamon Mein Shamil Hai Intezaar Ka Kaam

Agar To Kaamon Mein Shamil Hai Intezaar Ka Kaam

Agar To Kaamon Mein Shamil Hai Intezaar Ka Kaam
To kar chukka hoon mein tanha kayi hazaar ka kaam

Tumharay kehnay par girye ka luft doogna hai
Keh aik tu kaam pasandeeda uss peh yar ka kaam

Nahi bhi theek agar haal khuliya theek rahe
Keh sach dikhana nahi hota ishtihar ka kaam

Hai khud parasti khuda gahi mein aik sarhad
Aur uss peh karta hai gham khwar dar taar ka kaam

Usay neh tajriba girnay ka aur nah shoor pasand
Woh jheel kaisay karegi mujh aabshar ka kaam

Mein khud mein chupkay lagata hoon dehaan aur chillay
Badan se leta hoon hujray ka aur ghaar ka kaam

Agar to kaamon mein shamil hai intezaar ka kaam
To kar chukka hoon mein tanha kayi hazaar ka kaam
غزل
اگر تو کاموں میں شامل ہے انتظار کا کام
تو کر چکا ہوں میں تنہا کئی ہزار کا کام

تمہارے کہنے پر گریے کا لطف دُگنا ہے
کہ ایک تو کام پسندیدہ اُس پہ یار کا کام

نہیں بھی ٹھیک اگر حال خلیہ ٹھیک رہے
کہ سچ دکھانا نہیں ہوتا اشتہار کا کام

ہے خود پرستی خدا گہی میں ایک سرحد
اور اُس پہ کرتا ہے غم خواردار تار کا کام

اُسے نہ تجربہ گرنے کا اور نہ شور پسند
وہ جھیل کیسے کریگی مجھ آبشار کا کام

میں خود میں چپکے لگاتا ہوں دھیان اور چلًے
بدن سے لیتا ہوں حُجرے کا اور غار کا کام

اگر تو کاموں میں شامل ہے انتظار کا کام
تو کر چکا ہوں میں تنہا کئی ہزار کا کام
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں