Jo Tere Astaan Se Lot Aye

Jo Tere Astaan Se Lot Aye

Jo Tere Astaan Se Lot Aye
Janat-e-do jahan se lot aye

Bandagi ke muqqam se aagaah
Sarhad-e-la makaan se lot aye

Maah-e-anjum ke sath thay hum bhi
Hum magar darmeyaan se lot aye

Lag gaya je qafas mein jin jin ka
Bar haa asheyan se lot aye

Ab tu qaba mein roshni kar do
Ab tou koi botan se lot aye

Haye jo gird raah hain ab tak
Daye jo karawan se lot aye

Kaash ehsaan-o-khoold renai
Arz-e-hindostaan se lot aye

Jo tere astaan se lot aye
Janat-e-do jahan se lot ay
غزل
جوترے آستاں سے لوٹ آئے
جنت دو جہاں سے لوٹ آئے

بندگی کے مقام سے آگاہ
سرحدِ لا مکاں سے لوٹ آئے

ماہ انجم کے ساتھ تھے ہم بھی
ہم مگر درمیاں سے لوٹ آئے

لگ گیا جی قفس میں جن جن کا
بار ہا آشیاں سے لوٹ آئے

اب تو کعبے میں روشنی کر دو
اب تو کوئی بتاں سے لوٹ آئے

ہائے جو گرد راہ ہیں اب تک
دائے جو کارواں سے لوٹ آئے

کاش احساں وخلد رعنائی
ارضِ ہندوستاں سے لوٹ آئے

جوترے آستاں سے لوٹ آئے
جنت دو جہاں سے لوٹ آئے

اپنا تبصرہ بھیجیں