Na Sah Sakunga Gham-E-Zat Go Akela Main

غزل
 نہ سہہ سکوں گا غم ذات گو اکیلا میں
کہاں تک اور کسی پر کروں بھروسا میں
 
ہنر وہ ہے کہ جیوں چاند بن کر آنکھوں میں
رہوں دلوں میں قیامت کی طرح برپا میں
 
وہ رنگ رنگ کے چھینٹے پڑے کہ اس کے بعد
کبھی نہ پھر نئے کپڑے پہن کے نکلا میں
 
نہ صرف یہ کہ زمانہ ہی مجھ پہ ہنستا ہے
بنا ہوا ہوں خود اپنے لیے تماشا میں
 
مجھے سمیٹنے آیا بھی تھا کوئی جس وقت
دیار و دشت و دمن میں بکھر رہا تھا میں
 
یہ کس طرح کی محبت تھی کیسا رشتہ تھا
کہ ہجر نے نہ رلایا اسے نہ تڑپا میں
 
پڑا رہوں نہ قفس میں تو کیا کروں آخر
کہ دیکھتا ہوں بہت دور تک دھندلکا میں
 
بہت ملول ہوں اے صورت آشنا تجھ سے
کہ تیرے سامنے کیوں آ گیا سراپا میں
 
یہی نہیں کہ تجھی کو نہ تھی امید ایسی
مجھے بھی علم نہیں تھا کہ یہ کروں گا میں
 
میں خاک ہی سے بنا تھا تو کاش یوں بنتا
کہ اس کے ہاتھ سے گرتے ہی ٹوٹ جاتا میں
Ghazal
Na Sah Sakunga Gham-E-Zat Go Akela Main
Kahan tak aur kisi par karun bharosa main
 
Hunar wo hai ki jiyun chand ban kar aankhon mein
Rahun dilon mein qayamat ki tarah barpa main
 
Wo rang rang ke chhinte pade ki is ke baad
Kabhi na phir nae kapde pahan ke nikla main
 
Na sirf ye ki zamana hi mujh pe hansta hai
Bana hua hun khud apne liye tamasha main
 
Mujhe sametne aaya bhi tha koi jis waqt
Dayar o dasht o daman mein bikhar raha tha main
 
Ye kis tarah ki mohabbat thi kaisa rishta tha
Ki hijr ne na rulaya use na tadpa main
 
Pada rahun na qafas mein to kya karun aakhir
Ki dekhta hun bahut dur tak dhundlaka main
 
Bahut malul hun ai surat-ashna tujh se
Ki tere samne kyun aa gaya sarapa main
 
Yahi nahin ki tujhi ko na thi umid aisi
Mujhe bhi ilm nahin tha ki ye karunga main
 
Main khak hi se bana tha tu kash yun banta
Ki us ke hath se girte hi tut jata main

اپنا تبصرہ بھیجیں