Meray Ghar Ky Samny Aa Kar Asiay Shor Machaia Tha

 غزل
میرے گھر کے سامنے آکر ایسے شور مچایا تھا
جیسے اُس نے پہلی بار کسی سے دھوکہ کھایا تھا

شہر میں ایک کالونی تھی کالونی کیا تھی جنت تھی
جنت جس کے دروازں پر بندکوں کا سائیہ تھا

ایک سمندر کیسے کیسے دریاؤں کو جھلتا ہے
کل ایک دریا اپنے اندر صحرا بھر کے لایا تھا

بڑی بڑی باتیں کرتے تھے آ کر میرے ڈیرے پر
میں بھی کِن کے پچھے لگ کر سسٹم سے ٹکرایا تھا
Ghazal
Meray Ghar Ky Samny Aa Kar Asiay Shor Machia Tha
Jisay us ny pehli bar kisi say dhoka khaya tha

Shehar main aik colony the colony kiya the jannat the
Jannat jis kay darwazo per bandokon ka saaya tha

Aik samandar kisay kisay deryion ko jilta hai
Kal aik derya apny andar sehra bhar ky laya tha

Bari bari baation kerty thay meray deray per
Main bhi kin ky peechy lag kar system sy takraya tha

اپنا تبصرہ بھیجیں