Tooti Hai Meri Neend Magar Tum Ko Uss Se Kia

Tooti Hai Meri Neend Magar Tum Ko Uss Se Kia

Tooti Hai Meri Neend Magar Tum Ko Uss Se Kia
Bujte rahain hawaon se dar tum ko uss se kia

Tum mauj mauj missal saba ghumte raho
Kat jayen meri soch ke par tum ko uss se kia

Awron ka hath thamo unhein rasta dikhao
Mein bhool jaon apna hi ghar tum ko uss se kia

Abar guraiz pa ko barasne se kia gharaz
Seepi mein ban nah paye guhar tum uss se kia

Le jayen mujh ko mal-e-ghanimat ke saath aadu
Tum ne to dal di hai supar tum ko uss se kia

Tum ne tu thak ke dasht mein khaime laga liye
Tahna kattay kisi ka safar tum ko uss se kia

Tooti hai meri neend magar tum ko uss se kia
Bujte rahain hawaon se dar tum ko uss se kia
غزل
ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اُس سے کیا
بجتے رہیں ہواؤں سے در تم کو اُس سے کیا

تم موج موج مثل صبا گھومتے رہو
کٹ جائیں میری سوچ کے پر تم کو اُس سے کیا

اوروں کا ہاتھ تھامو اُنہیں راستہ دکھاؤ
میں بھول جاؤں اپنا ہی گھر تم کو اُس سےکیا

ابر گریز پا کو برسنے سے کیا غرض
سیپی میں بن نہ پائے گہر تم کو اُس سے کیا

لے جائیں مجھ کو مال غنیمت کے ساتھ عدو
تم نے تو ڈال دی ہے سپر تم کو اُس سے کیا

تم نے تو تھک کے دشت میں خیمے لگا لیے
تنہا کٹے کسی کا سفر تم کو اُس سے کیا

ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اُس سے کیا
بجتے رہیں ہواؤں سے در تم کو اُس سے کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں