Barhay Ga Hijr Mein Kuch Din Fashaar-E-Khoon

Barhay Ga Hijr Mein Kuch Din Fashaar-E-Khoon

Barhay Ga Hijr Mein Kuch Din Fashaar-E-Khoon Bhi Bohat
Aziyatoon ka hamein tajriba hai yun bhi bohat

Tumharay pass jo rahte hain umar bhar reh len
Hamien to dekhte rehnay ka yeh sukoon bhi bohat

Tumhein ujaloon ki kitni hawas hai aur hum se
Siyah bakhtoon ko kuch dair ka fasoon bhi bohat

Aur ab tu tark-e-talluq ke din hain, wehshat hai
Shuru ishq mein taari howa junoon bhi bohat

Mere mizaj ke baray mein pochnay walo
Mein bad mizaj si lagti nahi hoon, hoon bhi bohat

Barhay ga hijr mein kuch din fashaar-e-khoon bhi bohat
Aziyatoon ka hamein tajriba hai yun bhi bohat
غزل
بڑھے گا ہجر میں کچھ دن فشارِ خوں بھی بہت
اذیتوں کا ہمیں تجربہ ہے یوں بھی بہت

تمہارے پاس جو رہتے ہیں، عمر بھر رہ لیں
ہمیں تو دیکھتے رہنے کا یہ سکوں بھی بہت

تمہیں اُجالوں کی کتنی ہوس ہے اور ہم سے
سیاہ بختوں کو کچھ دیر کا فسوں بھی بہت

اور اب تو ترکِ تعلق کے دن ہیں ، وحشت ہے
شروع عشق میں طاری ہوا جنوں بھی بہت

مرے مزاج کے بارے میں پوچھنے والو
میں بد مزاج سی لگتی نہیں ہوں ، ہوں بھی بہت

بڑھے گا ہجر میں کچھ دن فشارِ خوں بھی بہت
اذیتوں کا ہمیں تجربہ ہے یوں بھی بہت
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں