Sitaron Se Agy Jahan Aur Bhi Hain

نظم:ستاروں سے آگے

ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں
ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں

تہی زندگی سے نہیں یہ فضائیں
یہاں سینکڑوں کارواں اور بھی ہیں

قناعت نہ کر عالم رنگ و بو پر
چمن اور بھی آشیاں اور بھی ہیں

اگر کھو گیا اک نشیمن تو کیا غم
مقامات آہ و فغاں اور بھی ہیں

تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا
ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں

اسی روز و شب میں الجھ کر نہ رہ جا
کہ تیرے زمان و مکاں اور بھی ہیں

گئے دن کہ تنہا تھا میں انجمن میں
یہاں اب مرے رازداں اور بھی ہیں

Nazam: Sitaron Se Agy
Sitaron Se Agy Jahan Aur Bhi Hain
Abhi Ishq Ky Imtehan Aur Bhi Hain
 
Tahi Zindagi Se Nahi Yeh Fizain
Yahan Senkron Karwan Aur Bhi Hain
 
Qinat Na Kar Alam Rang.o.Bu Par
Chaman R Bhi, Ashiyan Aur Bhi Hain
 
Agar Kho Gya Ik Nasheman To Kya Ghum
Maqamat Ah.o.Fugan Aur Bhi Hain
 
Tu Shaheen Hai Parwaz Hai Kam Tera
Tere Samne Asman Aur Bhi Hain
 
Isi Roz.o.Shab Mein Ulajh Kar Na Reh Ja
Keh Tere Zaman.o.Makan Aur Bhi Hain
 
Gay Din Keh Tanha Tha Main  Anjman Mein
Yahan Ab Mere Razdan Aur Bhi Hain

اپنا تبصرہ بھیجیں