Kaisi Gehri Baat Mili Hai Hum Ko Ek Deewane Se

Ghazal
Kaisi Gehri Baat Mili Hai Hum Ko Ek Deewane Se
Sari girhain khul jati hain ek girha ke khul jane se

Khamoshi se phail raha tha charo janibe sanata
Kaise kuch badal gaya hai ek awaz lagane se

Kiya hai ab jo nasla e nawo ne hum ko hans kar taal diya
Hum bhi kab us daur junoo main samjhe thay samjhne se

Taqat aur dolat ka nasha bas us ko zaahir kar deta hai
Warna fitrat kab badle halat ke badal jane se

Pehile wo khamosh raha phir yaqdam sholay pahan liye
Hum ne ek din pochi thi ek baat kisi parwane se
غزل
کیسی گہری بات ملی ہے ہم کو اک دیوانے سے
ساری گرہیں کھل جاتی ہیں ایک گرہا کے کھل جانے سے

خاموشی سے پھیل رہا تھا چاروں جانب سناٹا
کیسے سب کچھ بدل گیا ہے ایک آواز لگانے سے

کیا ہے اب جو نسلِ نو نے ہم کو ہنس کر ٹال دیا
ہم بھی کب اُس دُورِ جنوں میں سمجھے تھے سمجھنے سے

طاقت اور دولت کا نشہ بس اُس کا ظاہر کر دیتا ہے
ورنہ فطرت کب بدلی حالات کے بدلے جانے سے

پہلے وہ خاموش رہا پھر یکدم شعلے پہن لیے
ہم نے اک دن پوچھی تھی اک بات کسی پروانے سے

اپنا تبصرہ بھیجیں