Ab Nazar Andaz Honay Ki Bhi Asani Nahi

Ghazal
Ab Nazar Andaz Hone Ki Bhi Asani Nahi
Kon si ja hai jahaan mein zere  naghrani nahi
 
Baat kar aye khubsurat shakhs koi baat kar
Aur sabit kar tuhj koi pershani nahi
 
Ham guzarish per guzara kar rahe hain dino
Tujh se tujh ko cheen lane ki abhi thani nahi
 
To samjhta hai tera hijar gawara kar ke
Bath jaye gay mohabbat se kinara kar ke
 
Khud koshi karne nahi di teri aankhon ne mujhe
Lot aya hun mein darya ka nazara kar ke
 
Je tu karta hai usay paon talay rondny ko
Chor detaa hun muqaddar ka sitara kar ke
 
Karna ho tarak talluq to kuch aisa karna
Hum ko taklif na ho zikar tumhara kar ke
 
Is leya us ko dilata hun main gussa tabish
Takeh  dekho mein usko aur pyar kar ke
غزل
اب نظر انداز ہونے کی بھی آسانی نہیں
کون سی جا ہے جہاں میں زیر نگرانی نہیں
 
بات کر اے خوبصورت شخص کوئی بات کر
اور ثابت کر تجھے کوئی پریشانی نیہں
 
ہم گزارش پر گزارہ کر رہے ہیں اِن دنوں
تجھ سے تجھ کو چھین لینے کی ابھی ٹھانی نہیں
 
تو سمجھتا ہے تیرا ہجر گوارہ کر کے
بیٹھ جائیں گئے محبت سے کنارہ کر کے
 
خود کشی کرنے نہیں دی تیری آنکھوں مجھے
لوٹ آیا ہوں میں دریا کا نظارہ کر کے
 
جی تو کرتا ہےاُسے پاؤں تلے روندنے کو
چھوڑ دیتا ہوں مقدر کا ستارہ کر کے
 
کرنا ہو ترک تعلق تو کچھ ایسے کرنا
ہم کو تکلیف نہ زِکر تمہارا کر کے
 
اس لیے اُس کو دلاتا ہوں میں غصہ تاؔبش
تاکہ دیکھو میں اُسے اور پیارا کر کے

اپنا تبصرہ بھیجیں