Bas Ik Ussi Peh To Pori Tarah Ayaan Hoon Mein

Bas Ik Ussi Peh To Pori Tarah Ayaan Hoon Mein

Bas Ik Ussi Peh To Pori Tarah Ayaan Hoon Mein
Woh kehh raha hai mujhe rayigaan, to haan hoon mein

Jisay dikhai don, meri taraf ishara kare
Mujhe dikhai nahi de raha kahan hoon mein

Kisi ne pocha keh tum kon ho to bhool gaya
Abhi kisi ne bataya to tha, falaan hoon mein

Mein khud ko tujh se mitaon ga ahtiyaat ke sath
To bas nishaan laga de jahan jahan hoon mein

Har aik shakhs ko apni pari hoi hai yahan
Mera khayal hai apnon ke darmiyan hoon mein

Kisi zuban ki chup ke maani jannay hain
Mujhe batao, khamoshi ka tarjuman hoon mein

Mein kis se pochon yeh rasta durust hai keh ghalat
Jahan se koi guzarta nahi, wahan hoon mein

Idhar udhar se numi ka rasao rehta hai
Sarak se nechay banaya gaya makaan hoon mein

Jaben peh hijr ki tehreer darj karne mein
Kisi purany qalam ki tarah rawaan hoon mein

Bas ik usi peh tu pori tarah ayaan hoon mein
Woh kehh raha hai mujhe rayigaan, to haan hoon mein
غزل
بس اک اُسی پہ تو پوری طرح عیاں ہوں میں
وہ کہہ رہا ہے مجھے رائیگاں، تو ہاں! ہوں میں

جسے دکھائی دوں ، میری طرف اشارہ کرے
مجھے دکھائی نہیں دے رہا کہاں ہوں میں

کسی نے پوچھا کہ تم کون ہو تو بھول گیا
ابھی کسی نے بتایا تو تھا، فلاں ہوں میں

میں خود کو تجھ سے مٹاوں گا احیتاط کے ساتھ
تو بس نشان لگا دے جہاں جہاں ہوں میں

ہر ایک شخص کو اپنی پڑی ہوئی ہے یہاں
مرا خیال ہے اپنوں کے درمیاں ہوں میں

کسی زبان کی چپ کے معانی جاننے ہیں
مجھے بتاؤ ، خموشی کا ترجماں ہوں میں

میں کس سے پوچھوں یہ رستہ درست ہے کہ غلط
جہاں سے کوئی گزرتا نہیں ، وہاں ہوں میں

اِدھر اُدھر سے نمی کا رساؤ رہتا ہے
سڑک سے نیچے بنایا گیا مکاں ہوں میں

جبیں پہ ہجر کی تحریر درج کرنے میں
کسی پرانے قلم کی طرح رواں ہوں میں

بس اک اُسی پہ تو پوری طرح عیاں ہوں میں
وہ کہہ رہا ہے مجھے رائیگاں، تو ہاں! ہوں میں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں