Khaak Hi Khaak Thi Aur Khaak Bhi Kiya Kuch

Khaak Hi Khaak Thi Aur Khaak Bhi Kiya Kuch

Khaak Hi Khaak Thi Aur Khaak Bhi Kiya Kuch Nahi Tha
Mein jab aaya to mere ghar ki jaga kuch nahi tha

Kiya karon tujh se khayanat nahi kar sakta mein
Warna uss aankh mein mere liye kiya kuch nahi tha

Iss talluq ko koi kuch bhi kahe par mere liye
Rasta dekhte rehne ke siwa kuch nahi tha

Ab woh mere hi kisi dost ki mehboba hai
Mein palat jata magar peche bacha kuch nahi tha

Khak hi khak thi aur khaak bhi kiya kuch nahi tha
Mein jab aaya tu mere ghar ki jaga kuch nahi tha
غزل
خاک ہی خاک تھی اور خاک بھی کیا کچھ نہیں تھا
میں جب آیا تو میرے گھر کی جگہ کچھ نہیں تھا

کیا کروں تجھ سے خیانت نہیں کر سکتا میں
ورنہ اُس آنکھ میں میرے لیے کیا کچھ نہیں تھا

یہ بھی سچ ہے کہ مجھے اس نے کبھی کچھ نہ کہا
یہ بھی سچ ہے کہ اس عورت سے چھپا کچھ نہیں تھا

اب وہ میرے ہی کسی دوست کی محبوبہ ہے
میں پلٹ جاتا مگر پیچھے بچا کچھ نہیں تھا

خاک ہی خاک تھی اور خاک بھی کیا کچھ نہیں تھا
میں جب آیا تو میرے گھر کی جگہ کچھ نہیں تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں