Barson Purana Dost Mila Jaise Ghair Ho

Barson Purana Dost Mila Jaise Ghair Ho

Barson Purana Dost Mila Jaise Ghair Ho
Dekha ruka jhijhak ke kaha tum umair ho

Milte hain mushkilon se yahan hum khayal log
Tere tamam chahne walo ki khair ho

Kamray mein cigarettun ka dhuwan aur teri mehak
Jaisay shadeed dhund mein baghon ke sair ho

Hum mutmaeen bohat hai agar khush nahi bhi hai
Tum khush ho kia howa jo hamaray baghair ho

Paiiron mein uss ke sar ko dharay iltija kare
Aik iltija keh jis ka nah sar ho nah paiir ho

Barson purana dost mila jaise ghair ho
Dekha ruka jhijhak ke kaha tum umair ho
غزل
برسوں پرانا دوست ملا جیسے غیر ہو
دیکھا ، رکا، جھجک کے کہا تم عمیر ہو

ملتے ہیں مشکلوں سے یہاں ہم خیال لوگ
تیرے تمام چاہنے والو کے خیر ہو

کمرے میں سگرٹوں کا دھواں اور تیری مہک
جیسے شدید دھند میں باغوں کی سیر ہو

ہم مطمئن بہت ہیں اگر خوش نہیں بھی ہیں
تم خوش ہو کیا ہوا جو ہمارے بغیر ہو

پیروں میں اُس کے سر کو دھرے التجا کرے
ایک التجا کہ جس کا نہ سر ہو نہ پیر ہو

برسوں پرانا دوست ملا جیسے غیر ہو
دیکھا ، رکا، جھجک کے کہا تم عمیر ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں