Halat Jo Humari Hai Tumhari Tu Nahi Hai

غزل

حالت جو ہماری ہے تمہاری تو نہیں ہے
ایسا ہے تو پھر یہ کوئی یاری تو نہیں ہے
جتنی بھی بنالی ہو کمالی ہویہ دنیا
دنیا ہے تو پھر دوست ! تمہاری تو نہیں ہے
یہ تو جو محبت کا صلہ مانگ رہا ہے
اے شخص تو اندر سے بھکاری تو نہیں ہے؟؟
میں “ذات” نہیں، بات کے نشے میں ہوں پیارے
اس وقت مجھے تمہاری خماری تو نہیں ہے
تنہا ہی سہی، لڑ تو رہی ہے وہ اکیلی
بس تھک کے گری ہے ابھی ہاری تو نہیں ہے
مجمے سے اُسے یوں بھی بہت چڑہے کہ زریون
عاشق ہے میری جان! مداری تو نہیں ہے
یہ تو جو محبت کا صلہ مانگ رہا ہے
اے شخص تو اندر سے بھکاری تو نہیں ہے؟؟
Ghazal
Halat Jo Humari Hai Tumhari Tu Nahi Hai
Esa hai to phir yeh koi yaari to nahi hai
Jitne bhi bana le ho kama le ho yeh duniya
Duniya hai to phir dost tumhari tu nahi hai
Yeh toh jo muhbbat ka silha mang raha hai
Aay shakhs tu andar sy bhikari tu nahi hai
Main “zaat” nahi, baat ky nashay main hoon pyary
Is waqt mujhy tumhari khumari to nahi hai
Tanha hi sahi , lar to rahi hai wo akeli
Bas thak ky gari hai abhi hari to nahi hai
Mujhme say usay yun bhi bhout cher hai keh zaryoun
Ashiq hai meri jaan! madari tu nahi hai
Yeh toh jo muhbbat ka silha mang raha hai
Aay shakhs tu andar sy bhikari tu nahi haiؐ

اپنا تبصرہ بھیجیں