Dasnay Lage Hain Khwab Magar Kis Se Bolye

Dasnay Lage Hain Khwab Magar Kis Se Bolye

Dasnay Lage Hain Khwab Magar Kis Se Bolye
Mein janti thi pal rahi hoon sanpoliye

Bas yeh howa keh uss ne takalluf se baat ki
Aur hum ne rotay rotay dupattay bhago liye

Palkon peh kachi neendon ka ras phelta ho jab
Aise mein aankh dhoop ke rukh kaise khoo liye

Teri barahna pai ke dukh bantte hoye
Hum ne khud apne paon mein kantay chabhu liye

Mein tere naam le ke tazabzub mein par gai
Sab log apne apne azeezun ko ro liye

Khushbu kahin nah jaye peh israr hai bohat
Aur yeh bhi aazroo keh zara zulf khoo liye

Tasveer jab nai hai naya kainoos bhi hai
Phir tashtari mein rang purane nah ghoo liye

Dasnay lage hain khwab magar kis se bolye
Mein janti thi pal rahi hoon sanpoliye
غزل
ڈسنے لگے ہیں خواب مگر کس سے بولئے
میں جانتی تھی پال رہی ہوں سنپولیے

بس یہ ہوا کہ اُس نے تکلف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لیے

پلکوں پہ کچی نیندوں کا رس پھیلتا ہو جب
ایسے میں آنکھ دھوپ کے رخ کیسے کھولیے

تیری برہنہ پائی کے دکھ بانٹتے ہوئے
ہم نے خود اپنے پاوں میں کانٹے چبھولیے

میں تیرا نام لے کے تذبذب میں پڑ گئی
سب لوگ اپنے اپنے عزیزوں کو رو لیے

خوشبو کہیں نہ جائے پہ اصرار ہے بہت
اور یہ بھی آرزو کہ ذرا زلف کھو لیے

تصویر جب نئی ہے نیا کینوس بھی ہے
پھر طشتری میں رنگ پرانے نہ گھولیے

اپنا تبصرہ بھیجیں