Shoq-E-Raqs Se Jab Tak Ungliyan Nahi Khulten

Shoq-E-Raqs Se Jab Tak Ungliyan Nahi Khulten

Shoq-E-Raqs Se Jab Tak Ungliyan Nahi Khulten
Paon se hawaon ke bairiyan nahi khulten

Pair ko dua de kar kat gayi baharon se
Phool itne barh aaye khirkiyan nahi khulten

 

Phool ban ke seerun mein aur kon shamil tha
Shokhi saba se tou baliyan nahi khulten

 

Husna ko samjhne ko umar chahye janaan
Do ghari ki chahat mein larkiyan nahi khulten

 

Koi mauja shireen chum kar jagaye gi
Surjon ke neezon se sepiyan nahi khulten

 

Maa se kia kahin gi dukh hijar ka keh khud par bhi
Itni chhuti umaron ki bachiyan nahi khulten

 

Shakh shakh sargardan kis ki justuju mein hai
Kon se safar mein hain titliyan nahi khulten

 

Aadhi raat ki chup mein kis ki chap ubharti hai
Chhat peh kon aata hai seerhiyan nahi khulten

 

Paniyon ke charhne tak haal kehh saken aur phir
Kia qayamaten guzarein bastiyan khulten

 

Shoq-e-raqs se jab tak ungliyan nahi khulten
Paon se hawaon ke bairiyan nahi khulten
غزل
شوقِ رقص سے جب تک اُنگلیاں نہیں کھلتیں
پاؤں سے ہواؤں کے بیڑیاں نہیں کھلتیں

 

پیڑ کو دعا دے کر کٹ گئی بہاروں سے
پھول اِتنے بڑھ آئے کھڑکیاں نہیں کھلتیں

 

پھول بن کے سیروں میں اور کون شامل تھا
شوخی صبا سے تو بالیاں نہیں کھلتیں

 

حسن کو سمجھنے کو عمر چاہیے جاناں
دو گھڑی کی چاہت میں لڑکیاں نہیں کھلتیں

 

کوئی موجہ شیریں چوم کر جگائے گی
سورجوں کے نیزوں سے سیپیاں نہیں کھلتیں

 

ماں سے کیا کہیں گی دکھ ہجر کا کہ خود پر بھی
اِتنی چھوٹی عمروں کی بچیاں نہیں کھلتیں

 

شاخ شاخ سرگرداں کس کی جستجو میں ہیں
کون سے سفر میں ہیں تتلیاں نہیں کھلتیں

 

آدھی رات کی چپ میں کس کی چاپ اُبھرتی ہے
چھت پہ کون آتا ہے سیڑھیاں نہیں کھلتیں

 

پانیوں کے چڑھنے تک حال کہہ سکیں اور پھر
کیا قیامتیں گزریں بستیاں نہیں کھلتیں

 

شوقِ رقص سے جب تک اُنگلیاں نہیں کھلتیں
پاؤں سے ہواؤں کے بیڑیاں نہیں کھلتیں

اپنا تبصرہ بھیجیں