Kuch Faisla To Ho Keh Kidhar Jana Chahiye

Kuch Faisla To Ho Keh Kidhar Jana Chahiye

Kuch Faisla To Ho Keh Kidhar Jana Chahiye
Pani ko ab to sar se guzar jane chahiye

Nishtar badast shahr se chara giri ki lo
Aye zakhm be kisi tujhe bhar jana chahiye

Har bar airiyun peh gira hai mera lahu
Maqtal mein ab bah tarz dagar chahiye

Kia chal saken gay jin ka faqt masla yeh hai
Jane se pehle rukht safar jana chahiye

Sara jawar bhata mere dil mein hai magar
Ilzam yeh bhi chand ke sar jana chahiye

Jab bhi gaye azab dara-e-bam tha wohi
Aakhir ko kitni dair se ghar jana chahiye

Tuhmat laga ke maan peh jo dushman se daad le
Aise sukhan faroosh ko mar jana chahiye

Kuchh faisla to ho keh kidhar jana chahiye
Pani ko ab to sar se guzar jane chahiye
غزل
کچھ فیصلہ تو ہو کہ کدھر جانا چاہیے
پانی کو اب تو سر سے گزر جانا چاہیے

نشتر بدست شہر سے چارہ گری کی لو
اے زخم بے کسی تجھے بھر جانا چاہیے

ہر بار ایڑیوں پہ گرا ہے مرا لہو
مقتل میں اب بہ طرز دگر جانا چاہیے

کیا چل سکیں گے جن کا فقط مسلہ یہ ہے
جانے سے پہلے رخت سفر جانا چاہیے

سارا جوار بھاٹا مرے دل میں ہے مگر
الزام یہ بھی چاند کے سر جانا چاہیے

جب بھی گئے عذاب در ہ بام تھا وہی
آخر کو کتنی دیر سے گھر جانا چاہیے

تہمت لگا کے مان پہ جو دشمن سے داد لے
ایسے سخن فروش کو مر جانا چاہیے

کچھ فیصلہ تو ہو کہ کدھر جانا چاہیے
پانی کو اب تو سر سے گزر جانا چاہیے

اپنا تبصرہ بھیجیں