Kabhi Tu Nay Khud Bhi Socha Ki Ye Pyas Hai

غزل
کبھی تو نے خود بھی سوچا کہ یہ پیاس ہے تو کیوں ہے
تجھے پا کے بھی مرا دل جو اداس ہے تو کیوں ہے

مجھے کیوں عزیز تر ہے یہ دھواں دھواں سا موسم
یہ ہوائے شام ہجراں مجھے راس ہے تو کیوں ہے

تجھے کھو کے سوچتا ہوں مرے دامن طلب میں
کوئی خواب ہے تو کیوں ہے کوئی آس ہے تو کیوں ہے

میں اجڑ کے بھی ہوں تیرا تو بچھڑ کے بھی ہے میرا
یہ یقین ہے تو کیوں ہے یہ قیاس ہے تو کیوں ہے

مرے تن برہنہ دشمن اسی غم میں گھل رہے ہیں
کہ مرے بدن پہ سالم یہ لباس ہے تو کیوں ہے

کبھی پوچھ اس کے دل سے کہ یہ خوش مزاج شاعر
بہت اپنی شاعری میں جو اداس ہے تو کیوں ہے

ترا کس نے دل بجھایا مرے اعتبارؔ ساجد
یہ چراغ ہجر اب تک ترے پاس ہے تو کیوں ہے
Ghazal
Kabhi Tu Nay Khud Bhi Socha Ki Ye Pyas Hai To Kyun Hai
Tujhe Pa Ke Bhi Mera Dil Jo Udas Hai To Kyun Hai

Mujhe Kyun Aziz-Tar Hai Ye Dhuan Dhuan Sa Mausam
Ye Hawa-E-Sham-E-Hijran Mujhe Ras Hai To Kyun Hai

Tujhe Kho Ke Sochta Hun Mere Daman-E-Talab Mein
Koi Khwab Hai To Kyun Hai Koi Aas Hai To Kyun Hai

Main Ujad Ke Khi Hun Tera Tu Bichhad Ke Bhi Hai Mera
Ye Yaqin Hai To Kyun Hai Ye Qayas Hai To Kyun Hai

Mere Tan Barahna-Dushman Isi Gham Mein Ghul Rahe Hain
Ki Mere Badan Pe Salim Ye Libas Hai To Kyun Hai

Kabhi Puchh Us Ke Dil Se Ki Ye Khush-Mizaj Shair
Bahut Apni Shairi Mein Jo Udas Hai To Kyun Hai

Tera Kis Ne Dil Bujhaya Mere ‘Eatibar-Sajid’
Ye Charagh-E-Hijr Ab Tak Tere Pas Hai To Kyun Hai

اپنا تبصرہ بھیجیں