Suliman Sukhan Tu Khair Kia Hoon

Suliman Sukhan Tu Khair Kia Hoon

Suliman Sukhan Tu Khair Kia Hoon
Yake az shahr yaran saba hoon

Woh jab kehte hain farad hai khush aayind
Ajab hasrat se mur kar dekhta hoon

Firaaq aye maa keh mein zeena bah zeena
Kali hoon gul hoon khushboo hoon saba hoon

Sahar aur dupher aur sham shab
Mein un lafzun ke maani sochta hoon

Kahan tak kahili ke taan suntan
Thakan se choor ho kar gir para hoon

Taraqqi par Mubarak bad mat do
Rafiqun mein akela reh gaya hoon

Kabhi roota tha uss ko yaad kar ke
Ab aksar be sabab rone laga hoon

Sune woh aur phir kar le yaqeen bhi
Bari tarkeeb se such bolta hoon

Suliman sukhan tu khair kia hoon
Yake az shahr yaran saba hoon

Suliman sukhan tu khair kia hoon
Yake az shahr yaran saba hoon
غزل
سلیمان سخن تو خیر کیا ہوں
یکے از شہر یاران سبا ہوں

وہ جب کہتے ہیں فردا ہے خوش آیند
عجب حسرت سے مڑ کر دیکھتا ہوں

فراق اے ماں کہ میں زینہ بہ زینہ
کلی ہوں گل ہوں خوشبو ہوں صبا ہوں

سحر اور دوپہر اور شام شب
میں اُن لفظوں کے معنی سوچتا ہوں

کہاں تک کاہلی کے طعن سنتا
تھکن سے چور ہوکر گر پڑا ہوں

ترقی پر مبارک باد مت دو
رفیقو میں اکیلا رہ گیا ہوں

کبھی روتا تھا اُس کو یاد کرکے
اب اکثر بے سبب رونے لگا ہوں

سنے وہ اور پھر کر لے یقین بھی
بڑی ترکیب سےسچ بولتا ہوں

سلیمان سخن تو خیر کیا ہوں
یکے از شہر یاران سبا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں