Junoon Ka Rang Bhi Ho Shola| Ghazal Iftikhar Arif

Junoon Ka Rang Bhi Ho Shola| Ghazal Iftikhar Arif

Junoon Ka Rang Bhi Ho Shola-E-Namo Ka Bhi Ho
Sakoot shab mein ek andaz guftagu ka bhi ho

Mein jis ko apni gawahi mein le ke aaya hoon
Ajab nahi keh wohi aadmi adu ka bhi ho

Wo jis ke chaak garibaan pe tohmatein hain bahut
Usi ke hath mein shayad hunar rafoo ka bhi ho

Wo jis ke doobte hi nao dagmagane lagi
Kisay khabar wohi taara sitara joo ka bhi ho

Sabot mehkami-e-jaan thi jis ki barash naaz
Usi ki taigh se rishta rag galo ka bhi ho

Wafa ke baab mein kaar sukhan tamam ho
Meri zameen pe ek maarka lahoo ka bhi ho

Junoon ka rang bhi ho shola-e-namo ka bhi ho
Sakoot shab mein ek andaz guftagu ka bhi ho
غزل
جنوں کا رنگ بھی ہو شعلۂ نمو کا بھی ہو
سکوت شب میں اک انداز گفتگو کا بھی ہو

میں جس کو اپنی گواہی میں لے کے آیا ہوں
عجب نہیں کہ وہی آدمی عدو کا بھی ہو

وہ جس کے چاک گریباں پہ تہمتیں ہیں بہت
اسی کے ہاتھ میں شاید ہنر رفو کا بھی ہو

وہ جس کے ڈوبتے ہی ناؤ ڈگمگانے لگی
کسے خبر وہی تارا ستارہ جو کا بھی ہو

ثبوت محکمیٔ جاں تھی جس کی برش ناز
اسی کی تیغ سے رشتہ رگ گلو کا بھی ہو

وفا کے باب میں کار سخن تمام ہو
مری زمین پہ اک معرکہ لہو کا بھی ہو

جنوں کا رنگ بھی ہو شعلۂ نمو کا بھی ہو
سکوت شب میں اک انداز گفتگو کا بھی ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں