Palat Ke Dekhne Aayen Gay Gaah Gaah Mujhe

Palat Ke Dekhne Aayen Gay Gaah Gaah Mujhe

Palat Ke Dekhne Aayen Gay Gaah Gaah Mujhe
Abhi jo log samjhtay hain gird-e-rah mujhe

Meri safon mein yeh saray munafiqeen nah ho
Hara nah de kahin apni meri sipah mujhe

Tujhe yeh giryah-o-wehshat se aashani kia
Mein rasm-e-hijr hoon bas chhor mat bana mujhe

Abi to zindagi mamool peh hai baad-e-firaaq
Yeh hadsa tha jo pehlay tha jankah mujhe

Bura samjhtay hain kar-e-sukhan ko log magar
Bari azeez hai yeh hurmat-e-gunah mujhe

Nai jo chout hai woh mutabar to yeh lekin
Puranay zakhm se nisbat hai be pana mujhe

Adoye jaan meri mehnat ki daad banti hai
Hasad ki aag se bahir nikal sarah mujhe

Yahan peh munsafi bhi qeematan muyassar hai
Usay saboot melin gay agar gawah mujhe

Palat ke dekhne aayen gay gaah gaah mujhe
Abhi jo log samjhtay hain gird-e-rah mujhe
غزل
پلٹ کے دیکھنے آئیں گے گاہ گاہ مجھے
ابھی جو لوگ سمجھتے ہیں گردِ راہ مجھے

مری صفوں میں یہ سارے منافقین نہ ہو
ہرا نہ دے کہیں اپنی مری سپاہ مجھے

تجھے یہ گریہ و وحشت سے آشنائی کیا
میں رسمِ ہجر ہوں ، بس چھوڑ ، مت بناہ مجھے

ابھی تو زندگی معمول پہ ہے بعدِ فراق
یہ حادثہ تھا جو پہلے تھا جانکاہ مجھے

برا سمجھتے ہیں کارِ سخن کو لوگ مگر
بڑی عزیز ہے یہ حُرمتِ گناہ مجھے

نئی جو چوٹ ہے وہ معتبر تو یے لیکن
پرانے زخم سے نسبت ہے بے پناہ مجھے

عدوئے جاں مری محنت کی داد بنتی ہے
حسد کی آگ سے ہاہر نکل ، سراہ مجھے

یہاں پہ منصفی بھی قیمتاً میسر ہے
اُسے ثبوت ملیں گے اگر گواہ مجھے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں