Mele

میلے
باپ کی انگلی تھامے
اک ننھا سا بچہ
پہلے پہل میلے میں گیا تو
اپنی بھولی بھالی
کنچوں جیسی آنکھوں سے
اک دنیا دیکھی
یہ کیا ہے اور وہ کیا ہے
سب اس نے پوچھا
باپ نے جھک کر
کتنی ساری چیزوں اور کھیلوں کا
اس کو نام بتایا
نٹ کا
بازی گر کا
جادوگر کا
اس کو کام بتایا
پھر وہ گھر کی جانب لوٹے
گود کے جھولے میں
بچے نے باپ کے کندھے پر سر رکھا
باپ نے پوچھا
نیند آتی ہے
وقت بھی ایک پرندہ ہے
اڑتا رہتا ہے
گاؤں میں پھر اک میلہ آیا
بوڑھے باپ نے کانپتے ہاتھوں سے
بیٹے کی بانہہ کو تھاما
اور بیٹے نے
یہ کیا ہے اور وہ کیا ہے
جتنا بھی بن پایا
سمجھایا
باپ نے بیٹے کے کندھے پر سر رکھا
بیٹے نے پوچھا
نیند آتی ہے
باپ نے مڑ کے
یاد کی پگڈنڈی پر چلتے
بیتے ہوئے
سب اچھے برے
اور کڑوے میٹھے
لمحوں کے پیروں سے اڑتی
دھول کو دیکھا
پھر
اپنے بیٹے کو دیکھا
ہونٹوں پر
اک ہلکی سی مسکان آئی
ہولے سے بولا
ہاں!
مجھ کو اب نیند آتی ہے
:Mele
bap ki ungli thame
ek nanha sa bachcha
 
pahle-pahal mele mein gaya to
apni bholi-bhaali
 
kanchon jaisi aankhon se
ek duniya dekhi
 
ye kya hai aur wo kya hai
sab us ne puchha
 
bap ne jhuk kar
kitni sari chizon aur khelon ka
 
us ko nam bataya
nat ka
 
bazigar ka
jadugar ka
 
us ko kaam bataya
phir wo ghar ki jaanib laute
 
god ke jhule mein
bachche ne bap ke kandhe par sar rakkha
 
bap ne puchha
nind aati hai
 
waqt bhi ek parinda hai
udta rahta hai
 
ganw mein phir ek mela aaya
budhe bap ne kanpte hathon se
 
bete ki banh ko thama
aur bete ne
 
ye kya hai aur wo kya hai
jitna bhi ban paya
 
samjhaya
bap ne bete ke kandhe par sar rakkha
 
bete ne puchha
nind aati hai
 
bap ne mud ke
yaad ki pagdandi par chalte
 
bite hue
sab achchhe bure
 
aur kadwe mithe
lamhon ke pairon se udti
 
dhul ko dekha
phir
 
apne bete ko dekha
honton par
 
ek halki si muskan aai
haule se bola
 
han!
mujh ko ab nind aati hai

اپنا تبصرہ بھیجیں