Meri Mahfil Tha Meri Khalwat-E-Jaan Tha Kya Tha

غزل
میری محفل تھا مری خلوت جاں تھا کیا تھا
وہ عجب شخص تھا اک راز نہاں تھا کیا تھا

بال کھولے ہوئے پھرتی تھیں حسینائیں کچھ
وصل تھا یا کہ جدائی کا سماں تھا کیا تھا

ہائے اس شوخ کے کھل پائے نہ اسرار کبھی
جانے وہ شخص یقیں تھا کہ گماں تھا کیا تھا

تم جسے مرکزی کردار سمجھ بیٹھے ہو
وہ فسانے میں اگر تھا تو کہاں تھا کیا تھا

کیوں وصیؔ شاہ پہ پری زادیاں جاں دیتی ہیں
ماہ کنعان تھا شاعر تھا جواں تھا کیا تھا
 
Ghazal
Meri Mahfil Tha Meri Khalwat-E-Jaan Tha Kya Tha
Wo ajab shakhs tha ek raaz-e-nihan tha kya tha

Baal khole hue phirti thin hasinaen kuchh
Wasl tha ya ki judai ka saman tha kya tha

Hae us shokh ke khul pae na asrar kabhi
Jaane wo shakhs yaqin tha ki guman tha kya tha

Tum jise markazi kirdar samajh baithe ho
Wo fasane mein agar tha to kahan tha kya tha

Kyun ‘wasi’-shah pe pari-zadiyan jaan deti hain
Mah-e-kanan tha shair tha jawan tha kya tha

اپنا تبصرہ بھیجیں