Dua Ka Toota Howa Harf Sard Aah Mein Hai

Dua Ka Toota Howa Harf Sard Aah Mein Hai

Dua Ka Toota Howa Harf Sard Aah Mein Hai
Teri judai ka manzar bahi nigah mein hai

Tere badalne ki ba wasf tujh ko chaha hai
Yeh iteraf bhi shamil mere gunah mein hai

Azab de ga tou phir mujh ko khwab bhi de ga
Mein mutmain hoon mera dil teri panah mein hai

Bikhar chukka hai magar muskura ke milta hai
Woh rakh rakhao abhi meer kaj kalah mein hai

Jisay bahaar ke mehman khali chhor gaye
Woh ik makan abhi tak maken ki chaah mein hai

Yahi woh din thay jab ik dosray ko paya tha
Hamari salgirah theek ab ke mah mein hai

Mein bach bhi jaon to tanhai maar dale gi
Mere qabele ka har fard qatal gah mein hai

Dua ka toota howa harf sard aah mein hai
Teri judai ka manzar bahi nigah mein hai
غزل
دعا کا ٹوٹا ہوا حرف سرد آہ میں ہے
تری جدائی کا منظر ابھی نگاہ میں ہے

ترے بدلنے کی با وصف تجھ کو چاہا ہے
یہ اعتراف بھی شامل مرے گناہ میں ہے

عذاب دے گا تو پھر مجھ کو خواب بھی دے گا
میں مطمئن ہوں مرا دل تری پناہ میں ہے

بکھر چکا ہے مگر مسکرا کے ملتا ہے
وہ رکھ رکھاؤ ابھی میر کج کلاہ میں ہے

جسے بہار کے مہمان خالی چھوڑ گئے
وہ اک مکان ابھی تک مکیں کی چاہ میں ہے

یہی وہ دن تھے جب اک دوسرے کو پایا تھا
ہماری سال گرہ ٹھیک اب کے ماہ میں ہے

میں بچ بھی جاؤں تو تنہائی مار ڈالے گی
مرے قبیلے کا ہر فرد قتل گاہ میں ہے

دعا کا ٹوٹا ہوا حرف سرد آہ میں ہے
تری جدائی کا منظر ابھی نگاہ میں ہے

دعا کا ٹوٹا ہوا حرف سرد آہ میں ہے
تری جدائی کا منظر ابھی نگاہ میں ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں